Book Name:Tilawat Ki Fazilat

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ  رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

تلاوت کی فضیلت

شیطان اِس رسا لے سے بَہُت روکے گا مگر آپ پڑھ لیجئے ان شاء اللّٰہ  عَزَّوَجَلَّ  معلومات کا بیش بہا خزانہ ہاتھ آئیگا۔ 

دُرُود شریف کی فضیلت

          دو جہاں کے سلطان ،     سرورِ ذیشان ،     محبوبِ رَحمٰن عَزَّوَجَلَّ وصلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّمکا فرمانِ مغفِرت نِشان ہے،     مجھ پر دُرُودِپاک پڑھنا پُل صِراط پر نور ہے جو روزِ جُمُعہ مجھ پر اَسّی بار دُرُودِپاک پڑھے اُس کے اَسّی سال کے گناہ مُعاف ہوجائیں گے۔       (اَ لْجامِعُ الصَّغِیر لِلسُّیُوْطِیّص۳۲۰ حدیث ۵۱۹۱دار الکتب العلمیۃ بیروت

یہی ہے آرزو تعلیمِ قراٰں عام ہوجائے

ہر اِک پرچم سے اونچا پرچمِ اسلام ہو جائے

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !   صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

واہ کیا  بات ہے عاشقِ قراٰن کی

          حضرتِ سیِّدُناثابِت بُنانیقُدِّسَ سرُّہُ النُّورانی روزانہ ایک بار ختمِ قراٰن پاک فرماتے تھے۔      آپ رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ ہمیشہ دن کوروزہ رکھتے اورساری رات قِیا م   (عبادت)   فرماتے ،     جس مسجِد سے گزر تے اس میں دو رَکعت   (تحیۃ المسجد)   ضَرور پڑھتے۔      تحدیثِ نعمت کے طور پر فرماتے ہیں :  میں نے جامِع مسجِد کے ہرسُتُون کے پاس قراٰنِ پاک کا ختم اور بارگاہ ِ الہٰی عَزَّوَجَلَّ  میں گِریہ کیا  ہے۔      نَماز اور تِلاوتِ قراٰن کے ساتھ آپ رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ  کو خُصوصی  مَحَبَّتتھی،     آپ رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ  پر ایسا کرم ہوا کہ رشک آتا ہے چُنانچِہ وفات کے بعددورانِ تدفین  اچانک ایک اینٹ سَرَک کر اندر چلی گئی،     لوگ اینٹ اٹھانے کیلئے جب جھکے تو یہ دیکھ کر حیران رَہ گئے کہ آپ رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ قَبْر میں کھڑے ہو کرنَماز پڑھ رہے ہیں !   آپ رحمۃ اللہ تعالٰی علیہکے گھر والوں سے جب معلوم کیا  گیا  تو شہزادی صاحِبہ نے بتایا  :   والدِ محترمعلیہ رَحْمَۃُ اللّٰہِ الاکرم روزانہ دُعا کیا  کرتے تھے:   ’’یا اللّٰہ!   اگرتُو کسی کو وفات کے بعد قَبْر میں نَماز پڑھنے کی سعادت عطا فرمائے تو مجھے بھی مُشرّف فرمانا۔  ‘‘ منقول ہے:   جب بھی لوگ آپ رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ کے مزارِ پُراَنوارکے قریب سے گزرتے تو قَبْرِ انور سے تِلاوتِ قراٰن کی آواز آرہی ہوتی۔       (حِلیۃُالاولیا ء ج۲ ص۳۶۲۔  ۳۶۶ مُلتَقطاً دار الکتب العلمیۃ)   اللّٰہ  عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری مغفِرت ہو۔  ٰاٰمین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم    

دَہَن مَیلا نہیں ہو تا بدن مَیلا نہیں ہو تا

خدا کے اولیا  کا توکفن مَیلا نہیں ہوتا

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                  صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

ایک حَرف کی دس نیکیا ں

          قراٰنِ مجید،     فُرقانِ حمیداللّٰہُربُّ الانام عَزَّوَجَلَّ  کامبارَک کلام ہے ،     اِس کا پڑھنا ،     پڑھانااور سننا سنانا سب ثواب کا کام ہے۔  قراٰنِ پاک کا ایک حَرف پڑھنے پر 10نیکیوں کا ثواب ملتا ہے ،    چُنانچِہ خاتَمُ الْمُرْسَلین،     شفیعُ الْمُذْنِبیْن،    رَحمَۃٌ لِّلْعٰلمین صلی اﷲ تعالٰی علیہ واٰلہ وسلم  کا فرمانِ دِلنشین ہے:   ’’جو شخص کتابُ اﷲ کا ایک حَرف پڑھے گا،     اُس کو ایک نیکی ملے گی جو دس کے برابر ہوگی۔      میں یہ نہیں کہتا الٓمّٓ  ایک حَرف ہے،     بلکہ اَلِف ایک حَرف ،     لام  ایک حَرف اور میم ایک حَرف ہے۔  ‘‘   (سُنَنُ التِّرْمِذِی ج۴ ص۴۱۷حدیث ۲۹۱۹    

 



Total Pages: 14

Go To