Book Name:Tazkira e Imam Ahmad Raza رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

میری زندگی کا پہلا رِسالہ

                                          از:  سگِ مدینہ محمد الیاس قادِری رضوی عُفِیَ عَنہ 

    اَلْحَمْدُلِلّٰہ عَزَّ وَجَلَّ مجھے بچپن ہی سے اعلیٰ حضرت امام اَحمد رضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرحمٰن سے مَحَبَّت ہو گئی تھی۔ ’’ تذکرۂ احمدرضا بسلسلۂ یوم رضا ‘‘ میری زندگی کا پہلا رِسالہ ہے۔جو کہ میں نے 25صفر المظفَّر 1393ھ  (بمطابق 31-3-1973)  کو’’ یومِ رضا‘‘ کے موقع پر جاری کیا تھا۔ اَلْحَمْدُلِلّٰہ عَزَّ وَجَلَّ  اِس کے بہت سارے ایڈیشن شائِع ہوئے ہیں ، وقتاً فوقتاً اِس میں ترامیم کی ہیں، روضۂ رسولعلٰی صاحِبِہا الصَّلٰوۃ وَالسَّلام کی یاد دلانے والے دستخط بھی اُن دنوں نہیں تھے بعدمیں ذہن بنا مگر آخِری صَفحے پر بطورِ یادگار تاریخ پُرانی رکھی ہے ، اللہ عَزَّوَجَلَّ  میری اِس کاوِش کو قبول فرمائے اور اِس مختصر سے رِسالے کو عاشقانِ رسول کیلئے نَفع بخش بنائے ۔اللہ  تبارَکَ وَ تعالیٰ بطفیلِ اعلیٰ حضرت میری اور رسالے کے ہر سُنّی قاری کی بے حساب مغفِرت کرے۔اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                                                    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

طلب غمِ مدینہ و بقیع و مغفرت و

بے حساب  جنّت الفردوس  میں آقا کے پڑوس کا طالب

۲۵ محرم الحرام ۱۴۳۳ھ

2011-12-21

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

تذکرہ امام احمد رضا رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

شیطٰن لاکھ سُستی دلائے مگربہ نیَّتِ ثواب یہ رِسالہ  (20صَفْحات)  پورا پڑھ کر اپنی دنیا وآخِرت کا بھلا کیجئے۔

دُرُود شریف کی فضیلت

      رَحمتِ عالَم، نورِ مُجَسَّم، شاہِ بنی آدم، شفیعِ اُمَم ، رسولِ اکرم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فرمانِ شَفاعت نشان ہے: ’’ جو مجھ پر دُرُودِ پاک پڑھے گا میں اُس کی شَفاعت فرماؤں گا۔‘‘  (اَلْقَوْلُ الْبَدِ یع ص۲۶۱ مؤسسۃ الریان بیروت)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                              صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

ولادتِ باسعادت

             میر  ے آقا اعلٰی حضرت ، اِمامِ اَہْلسُنّت،  ولیٔ نِعمت، عظیمُ البَرَکَت، عظیمُ المَرْتَبت، پروانۂِ شَمْعِ رِسالت، مُجَدِّدِ دین  ومِلَّت، حامیِ سنّت ، ماحِیِ بِدعت، عالِمِ شَرِیْعَت ، پیرِ طریقت، باعثِ خَیْر وبَرَکت، حضرتِ علّامہ مولانا الحاج الحافِظ القاری شاہ امام اَحمد رَضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرحمٰن کی ولادتِباسعادت بریلی شریف کے مَحَلّہ جَسولی میں۱۰ شَوّالُ المُکرّم ۱۲۷۲ھ بروزِ ہفتہ بوقتِ ظُہر مطابق 14جون1856ء کو ہوئی۔ سَن ِ پیدائش کے اِعتبار سے آپ کا نام  اَلْمُختار  (۱۲۷۲ھ)  ہے۔ (حیاتِ اعلٰی حضرت ج۱ ص۵۸ مکتبۃ المدینہ بابُ المدینہ کراچی)

اعلٰی حضرت کا سنِ ولادت

              میرے آقا اعلیٰ حضرت رَحْمَۃُاللہِ تعالٰی علیہ نے اپنا سَنِ ولادت پارہ28 سورۃ المجادلہ کی آیت نمبر22 سے نکالا ہے۔ اِس آیتِ کریمہ کے عِلمِ اَبْجَد کے اعتبار کے مطابِق 1272عَدَد ہیں اور ہجری سال کے حساب سے یِہی آپ کا سنِ ولادت ہے۔چُنانچِہ مکتبۃُ المدینہ کی مطبوعہ ملفوظات اعلیٰ حضرتصَفْحَہ410 پر ہے: وِلادَت



Total Pages: 8

Go To