Book Name:Siyah Faam Ghulam

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

سیاہ فام غلام  (12مُعجِزات)[1]

شیطٰن لاکھ سُستی دِلائے یہ رِسالہ(48صَفَحاتمکمَّل پڑھ لیجئے

اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ  وَجَلَّآپ کا دِل سینے میں  جھوم اُٹھے گا  ۔

 دُورُد شریف کی فضیلت

       امامُ الصّابِرین ، سیّدُ الشّاکِرین، سلطانُ الْمُتَوَکِّلِین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ     کا فرمانِ دلنشین ہے :  جِبرئیل (عَلَیْہِ السَّلام ) نے مجھ سے عرض کی کہ رب تعالیٰ فرماتا ہے : اے مـحـمّد! (عَلَیْہِ الصَّلَاۃُ وَالسَّلَام )کیاتم اِس بات پر راضی نہیں  کہ تمہارا اُمَّتی پر ایک بار دُرُود بھیجے ، میں  اُس پر دس رَحمتیں  نازل کروں  اور آپ کی اُمَّت میں  سے جو کوئی ایک سلام بھیجے ، میں  اُس پر دس سلام بھیجوں  ۔ (مِشْکَاۃُ الْمَصَابِیح ، ج۱ ص۱۸۹ ، حدیث ۹۲۸ ، دارالکتب العلمیۃ بیروت )     

         مُفَسّرِشہیر حکیمُ الْاُمَّت حضر  ت ِ مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الحَنّان فرماتے ہیں  : رب کے سلام بھیجنے سے مُرادیا تو بذرِیعۂ ملائکہ اسے سلام کہلوانا ہے یا آفتوں  اورمصیبتوں  سے سلامت رکھنا ۔  (مراۃ المناجیح ج۲، ص۱۰۲، ضیاء القراٰن)

مصطفٰے جانِ رحمت  پہ لاکھوں  سلام

شَمعِ بزمِ ہدایت پہ لاکھوں  سلام

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                                           صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

{1}  سیاہ فام غلام

          صَحرائے عَرَب میں  ایک قافِلہ اپنی منزِل کی طرف رواں  دواں  تھا ۔  اِثنائے راہ(یعنی راستے میں ) پانیخَتْم ہوگیا ۔  قافِلے والے شدّتِ پیاس سے بے تاب ہوگئے اورموت ان کے سروں  پرمَنڈلانے لگی کہ کرم ہوگیا   ؎

ناگہانی آں  مُغِیثِ ہر دو کَون

مصطفی پیداشُدہ از بہرِعَون

          یعنی اچانک دونوں  جہاں  کے فریاد رَس میٹھے میٹھے مصطفی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَان کی اِمداد کے لیے تشریف لے آئے ۔ اہلِ قافِلہ کی جان میں  جان آ گئی ! اللہ کے محبوب ، دانائے غُیُوب ، مُنَزَّہٌ عَنِ الْعُیُوبعَزَّ وَجَلَّ  وصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے فرمایا : ’’وہ سامنے جوٹِیلہ ہے اس کے پیچھے ایک سانڈنی سُوار( یعنی اونٹ سوار) سیاہ فام حبشی غلام  سُوار گزررہا ہے ، اس کے پاس ایک مَشکیزہ ہے  ، اُسے سانڈنی سَمیت میرے پاس لے آؤ ۔ ‘‘چُنانچِہ کچھ لوگ ٹیلے کے اُس پار پہنچے تو دیکھا کہ واقِعی ایک سانڈنی سُوارحبشی غلام جارہاہے ۔ لوگ اس کو تاجدارِ رسالتصَلَّی اللہُ



[1]    یہ بیان امیر اہلسنت دَامَت بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہنے تبلیغِ قراٰن وسنت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک دعوتِ اسلامی کے  12 ربیعُ النور شریف(۱۴۳۰ھ)  کے اِجتِماعِ میلاد میں فرمایا ۔ ضَروری ترمیم کے ساتھ تحریراً حاضرِ خدمت ہے  ۔



Total Pages: 19

Go To