Book Name:Karbala Ka Khooni Manzar

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

دُ رُود شَریف کی فضیلت

       ایک شخص نے خواب میں خوفناک بلا دیکھی ،  گھبرا کر پوچھا :  تُوکون ہے؟بلا نے جواب دیا : میں تیرے بُرے اعمال ہوں  ۔ پوچھا: تجھ سے نَجات کی کیا صورت ہے ؟ جواب ملا :  دُرُود شریف کی کثرت  ۔ (اَلْقَوْلُ الْبَد ِیع ص ۲۲۵،    مؤسسۃ الرّیان بیروت)

 صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب                             صلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

       بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ ط سگِ مدینہ محمد الیاس عطّار قادری رضوی عفی عنہ کی جانب سے مدینے کی دیوانی ،   میٹھے مصطفی صلی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلم کی مَستانی،   مُبلِّغۂ  دعوتِ اسلامی([1])....... کی خدمت میں ،   مَدَنی فضاؤں کی ،   نُور بار ہواؤں کی ،   اور وَہاں کی کیف آور گھٹاؤں کی بَرَکتوں سے مالامال خوشگوار سلام

اَلسَّلاَمُ عَلَیْکُم وَرَحْمَۃُ اللہِ وَبَرَکَاتُہٗ         اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ عَلٰی کُلِّ حَال

        آپ کا دَستی مکتُوب اپنے اندر عشقِ رسُول صلی اللہ تعالٰی علیہ و اٰلہٖ سلم کی چاشنی لئے مجھ بدکار کے دستِ گنہگار میں آیا،   مدینے کی مٹھاس سے تربتر مکتوب پڑھا،   آپ دعوتِ اسلامی کیلئے بَہُت کُڑھتی اورکوششیں بھی کرتی ہیں یہ جان کر دل باغ باغ بلکہ باغِ مدینہ بن گیا ۔

     میری مَدَنی بیٹی !  لوگوں کے طعنوں کی پرواہ مت کیجئے،   جو بھی سنّتوں کے راستے پر چلنے کی کوشِش کرتا ہے آج کل اس کے ساتھ مُعاشرہ اکثر اِسی قسم کا نارَوا سلوک کرتا ہے   ۔   آہ !    ؎

وہ دور آیا کے دیوانۂ نبی کے لئے

ہر ایک ہاتھ میں پتّھر دکھائی دیتا ہے

کربلا کا خُونِیں منظر

          جب کبھی سنّتوں پر عمل یا اس کی خدمت کے سبب آپ پر ظُلْم و سِتَم ہو تو اُس وقت کربلاکے خُونِیں منظر کا تصوُّر باند ھ لیا کیجئے ۔  خاندانِ نُبُوَّت کا آخِر قُصورہی کیا تھا؟ یہی ناکہ وہ اسلام کی سربُلندی چاہتے تھے ۔  اِ س مقدَّس جُرم کی پاداش میں گلشنِ رسالت صلی اللہ تعالٰی علیہ و اٰلہٖ سلم کے نَو شُِگفتہ پھولوں کو کس قَدَر بے دَردی  کے ساتھ پامال کیا گیا ۔  آہ !  گلستانِ زَہرارضی اللہ تعالٰی عنہا کی وہ کَلیاں جو ابھی پوری طرح کِھلنے بھی نہ پائی تھیں ان کو کیسی بے رَحمی و سَفّاکی کے ساتھ گھوڑوں کی ٹاپوں تلے رَونداگیا ! اُس وقت سیِّدُالشُّہدا ء امامِ حسین رضی اللہ تعالٰی عنہ پر کیا گُزَر رہی ہوگی جس وَقت اُ ن کے جِگر پارے کٹ کٹ کر خاک و خون میں گرتے اور تڑپتے ہوں گے !

آہ نَنَّھا علی اصغر

 



[1]    ایک پریشان حال مبلِّغہ اسلامی بہن کے لئے تسلّیوں اور اسی کے اِستفسار پر دعوتِ اسلامی کا مَدَنی کام کرنے کے طریقِ کار پر مَبنی ایک عظیم رہنما مکتوب ضروری ترامیم کے ساتھ   ۔ پیش کش :  مجلسِ مکتوبات



Total Pages: 14

Go To