Book Name:40 Farameen e Mustafa صلّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہ وسلّم

نماز، دُرُود شریف ، علمِ دین ، توبہ اور سلام کی فضیلت وغیرہ پر مشتمل

 رنگ برنگے پھولوں کا گلدستہ 

 

 

 

40فرامین مُصطفٰی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ

 

 

 

پیش کش

مجلس المدینۃ العلمیۃ  (دعوتِ اسلامی )

 (شعبہ اِصلاحی کتب )

ناشر

مکتبۃ المد ینہ باب المدینہ کراچی

 

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیۡنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیۡنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیۡطٰنِ الرَّجِیۡمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیۡم ط

از:  شیخ طریقت امیر اہلسنّت حضرت علامہ مولانا ابو بلال محمد الیاس عطار قادری رضوی دامت برکاتہم العالیہ

 ’’ فرامینِ مصطفی  ‘‘  کے11 حُروف کی نسبت سے اس رسالے کو پڑھنے کی  ’’ 11  نیّتیں ‘‘

 فرمانِ مصطفی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ:  نِیَّۃُ الْمُؤْمِنِ خَیۡرٌ مِّنْ عَمَلِہٖ مسلمان کی نیّت اس کے عمل سے بہتر ہے۔ (المعجم الکبیر للطبرانی، الحدیث:  ۵۹۴۲، ج۶، ص۱۸۵)  

 دو مَدَنی پھول:   {۱}  بِغیر اچّھی نیّت کے کسی بھی عملِ خیر کا ثواب نہیں ملتا۔

 {۲} جتنی اچّھی نیّتیں زِیادہ، اُتنا ثواب بھی زِیادہ۔

  {۱} ہر بارحَمْد و  {۲} صلوٰۃ اور {۳} تعوُّذو {۴} تَسمِیہ سے آغاز کروں گا (اسی صفحہ کے  اُوپر دی ہوئی دو عَرَبی عبارات پڑھ لینے سے چاروں نیّتوں پر عمل ہوجائے گا)   {۵}  حتَّی الْوَسْعْ اِس کا باوُضُو اور  {۶} قِبلہ رُو مُطالَعَہ کروں گا  {۷} جہاں جہاں ’’ اللّٰہ ‘‘ کا نام  پاک آئے گا وہاں عَزَّوَجَلَّ  اور {۸}  جہاں جہاں  ’’ سرکار ‘‘ کا اِسْمِ مبارَک آئے گا وہاں صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ پڑھوں گا {۹} دوسروں کویہ رسالہ پڑھنے کی ترغیب دلاوں گا {۱۰}  اس حدیثِ پاک   ’’ تَھَادَوْا تَحَابُّوْا ‘‘ ’’ ایک دوسرے کو تحفہ دو آپس میں   محبت بڑھے گی  ‘‘  {مؤطا امام مالک ، ج۲، ص۴۰۷، حدیث ۱۷۳۱}  پرعمل کی نیت سے یہ رسالہ (ایک یا  حسبِ توفیق)  خرید کر دوسروں کو تحفۃً دوں گا {۱۱} اس رسالے کے مطالَعہ کا ثواب ساری اُمّت کو ایصال کروں گا۔

پہلے اسے پڑھ لیجئے

             حضرتِ سیِّدُنا ابو درداءرَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ  فرماتے ہیں کہ رَحْمَتِ عَالَم، نُورِ مُجَسَّم، رَسُولِ مُکَرَّم، سَراپَا جُودوکَرم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَسے عرض کی گئی کہ اس علم کی حد کیا ہے جہاں انسان پہنچے تو عالم ہو؟  آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَنے اِرشاد فرمایا :  ’’ مَنْ حَفِظَ عَلٰی اُمَّتِیۡ اَرْبَعِیۡنَ حَدِیۡثًا فِیۡ اَمْرِدِیۡنِہَا بَعَثَہُ اللّٰہُ  فَقِیۡھًاوَکُنْتُ لَہٗ یَوْمَ الْقِیَامَۃِ شَافِعًا وَ



Total Pages: 20

Go To