Book Name:Islam kay Bunyadi Aqeeday

کو بڑی تکلیف ہوگی اور عیسیٰ عَلَیْہِ السَّلَام کی سانس کی خوشبو بڑھتی چلی جائے گی یہاں تک کہ دجال بھاگنے پر مجبور ہوجائے گا،  حضرت عیسیٰ عَلَیْہِ السَّلَام دجال کا پیچھا کریں گے یہاں تک کہ نیزے سے اس کو قتل کردیں گے۔ ([1]) دجال کے فتنے  اور اس کی طاقت اور حکومت کا خاتمہ،  یہ نئے دور کا فتح باب ہو گا۔

          حضرت عیسیٰ عَلَیْہِ السَّلَام کی موجودگی کی برکت سے نعمتوں میں اضافہ ہوگا،  لوگوں کے پاس اتنی دولت آجائے گی کہ ضرورت مند ومحتاج شخص کو ڈھونڈنا مشکل ہوجائے گا۔ ([2])  لوگوں کی آپس میں دشمنی نہیں ہوگی،  حسد نہیں ہوگا ایک دوسرے پر بداعتمادی اوراِس طرح کی بری عادتیں ختم ہوجائیں گی۔ ([3])

          حضرت عیسٰی عَلَیْہِ السَّلَام خنزیر کو ماریں گے اورصلیب کو توڑ دیں گے۔ ([4])  اس وقت جتنے بھی اہل کتاب موجود ہوں گے اور جتنے لوگ دجال کے پیچھے لگ کر اپنا ایمان برباد کرچکے ہوں گے وہ سب کے سب حضرت عیسیٰ عَلَیْہِ السَّلَام کے ہاتھ پر بیعت کرلیں گے اور اسلام لے آئیں گے پھر ایک ہی دین ہوگا اوروہ دین اسلام ہوگا۔ ([5])

 یاجوج ومَاجوج کا ظہور:

          حضرت عیسیٰ عَلَیْہِ السَّلَام کی موجودگی کی برکت یوں ظاہر ہوگی کہ ہر طرف اللّٰہ تعالیٰ کی نعمتوں کی بارش برس رہی ہوگی،  یا جوج وماجوج نامی ایک قوم کا ظہور ہوگا جو کہ قتل و غارت کریں گے،  جس طرف وہ جائیں گے ہرچیز کو تباہ و برباد کرتے ہوئے گزرجائیں گے ،  دریاؤں اور جھیلیں جو اُن کے راستے میں آئیں گی اُن کا پانی پی کر ختم کردیں گے،  وہ چلتے جائیں گے یہاں تک کہ خمر پہاڑ جو کہ بیت المقدس میں ہے وہاں تک پہنچ جائیں گے،  انسانوں کے قتل عام کے بعد آسمان والوں کو بھی قتل کرنے کی کوشش کریں گے،  حضرت عیسیٰ عَلَیْہِ السَّلَام اور دیگرمؤمنین مدد کے لیے دعا کریں گے،  اللّٰہ تعالیٰ ایسے کیڑے بھیجے گا جو ’’  یاجوج وماجوج ‘‘  کی قوم کو ختم کردیں گے لہٰذا وہ سب ہلاک ہوجائیں گے اور ان کی لاشوں کو پرندے اُٹھا کر لے جائیں گے۔ پھر کئی دنوں تک موسلا دھار بارش ہوگی،  زمین بہت صاف ستھری اور زرخیز ہوجائے گی، یہ ایسے وقت کا آغاز ہو گا کہ جس میں رزق کی فراوانی ہوگی اور چیزوں میں برکتیں نظر آئیں گی،  یوں بُرے دنوں کے بعد پھر اچھے دن لوگوں پر ظاہر ہو جائیں گے۔ ([6])

دَ ا  بَّۃُ الْاَرْض کا ظہور:

          دَ ا  بَّۃُ الْاَرْض بہت طاقت ور اور زمینی جانور ہے،  اس کی بڑی خطرناک اور وحشیانہ شکل ہوگی،  اس کے ایک ہاتھ میں موسیٰ عَلَیْہِ السَّلَام کا عصا ہوگا اور دوسرے ہاتھ میں حضرت سلیمان عَلَیْہِ السَّلَام کی انگوٹھی ہوگی، عصا کے ذریعے سے وہ مسلمانوں کی پیشانی پر ایک چمک دار نشان لگائے گا اور ہر کافر کی پیشانی پر وہ انگوٹھی کے ذریعے سے ایک کالا نشان داغ دے گا،  یہ نشان مسلمان کو کافر سے جدا



[1]    ابن ماجہ، ابواب الفتن، باب فتنۃ الدجال، ۴ / ۴۰۶،حدیث: ۴۰۷۷

 

 

[2]    بخاری،کتاب أحادیث الأنبیاء، باب نزول عیسی ابن مریم علیھما السلام، ۲ / ۴۵۹، حدیث: ۳۴۴۸

[3]    مسلم،کتاب الإیمان، باب نزول عیسی ابن مریم۔۔۔الخ، ص۹۲،حدیث: ۲۴۳

[4]    بخاری،کتاب أحادیث الأنبیاء، باب نزول عیسی ابن مریم علیھما السلام، ۲ / ۴۵۹، حدیث:  ۳۴۴۸

[5]    ابوداود،کتاب الملاحم، باب (ذ کر) خروج الدجال،۴ / ۱۵۸، حدیث: ۴۳۲۴

[6]    ترمذی،کتاب الفتن باب ماجاء فی فتنۃ الدجال،۴ / ۱۰۴، حدیث: ۲۲۴۷ ملخصًا و بہار شریعت، حصہ ۱  ،۱ / ۱۲۴- ۱۲۵



Total Pages: 55

Go To