Book Name:Beta Hoto Aisa

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

بیٹا ہو توایسا!

دُرُود شریف کی فضیلت

  فرمانِ مصطَفٰے صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ:  جو مجھ پر ایک دن میں 50بار درودِ پاک پڑھے قیامت کے دن میں اس سے ہاتھ ملاؤں گا۔   (ابن بشکوال ص۹۰حدیث۹۰)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!           صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

تینوں رات ایک طرح کا خواب

        حضرتابراہیم عَلَيْهِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلامنے ذُوالْحَج کی آٹھویں رات ایک خواب دیکھا جس میں کوئی کہنے والا کہہ رہا ہے:  ’’بے شک اللہ عَزَّوَجَلَّتمہیں اپنے بیٹے کو ذَبح کرنے کا حُکم دیتا ہے ۔   ‘‘  آپ صبح سے شام تک اِس بارے میں غور فرماتے رہے کہ یہ خواباللہ عَزَّوَجَلَّکی طرف سے ہے یا شیطان کی جانب سے؟ اِسی لئے آٹھ ذُوالْحَجکا نام یَوْمُ التَّرْوِیَہ  (یعنی سوچ بچار کا دن) رکھا گیا ۔   نویں رات پھر وہی خواب دیکھا اور صبح یقین کرلیا کہ یہ حُکم اللہ عَزَّوَجَلَّکی طرف سے ہے ، اِسی لئے9 ذُوالْحَجکو یوم عرفہ ( یعنی پہچاننے کا دن)  کہا جاتا ہے۔  دسویں رات پھر وہی خواب دیکھنے کے بعد آپ عَلَيْهِالصَّلٰوۃُ وَالسَّلامنے صبح اس خواب پر عمل کرنے یعنی بیٹے کی قربانی کا پکا ارادہ فرما لیاجس کی وجہ سے 10ذُوالْحَجکو یَوْمُ النَّحْر یعنی ’’ذَبح کا دن ‘‘کہا جاتا ہے۔    (تفسیرِ کبیر ج۹ص۳۴۶)

’’بیٹے کی قربانی‘‘ سے روکنے کی شیطان کی ناکام کوششیں

اللہ عَزَّ وَجَلَّکے حکم پر عمل کرتے ہوئے بیٹے کی قربانی کے لئے حضرتِ ابراہیم عَلَيْهِالصَّلٰوۃُ وَالسَّلامجب اپنے پیارے بیٹے حضرتِ اسمٰعیل عَلَيْهِالصَّلٰوۃُ وَالسَّلامکوجن کی عمر اُسوَقت 7سال  (یا 13 سال یا اِس سے تھوڑی زائد )  تھی لے کر چلے ۔   شیطان ان کی جان پہچان والے ایک شخص کی صورت میں ظاہر ہوا اورپوچھنے لگا:  اے ابراہیم! کہاں کا ارادہ ہے؟  آپ نے



Total Pages: 15

Go To