Book Name:Qabar ka Imtihan

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

قبر کا امتحان ([1])

شیطٰن لاکھ سُستی دلائے یہ بیان (26صفحات)  مکمَّل پڑھ لیجئے اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ

آپ اپنے دل میں مَدَنی انقلاب برپاہوتاہوا محسوس فرمائیں گے۔  

 دُرود شریف کی فضیلت

              سرکارِنامدار،    مدینے کے تاجدارحبیبِ  پَرْوَرْدَگار،    شفیعِ روزِ شُمار،     جنابِ احمد ِمختار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا ارشادِ نور بار ہے:   ’’تم اپنی مجلسوں کو مجھ پر دُرُودِ پاک پڑھ کر آراستہ کرو کیونکہ تمہارا مجھ پردُرُودِ پاک پڑھنا بروزِقِیامت تمہارے لئے نور ہوگا۔   ‘‘    (اَلْجامِعُ الصَّغِیر ص۲۸۰ حدیث ۴۵۸۰)  

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!      صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

یاد رکھ ہر آن آخِر موت ہے               بن تُو مت انجان آخِر موت ہے

مرتے جاتے ہیں ہزاروں آدَمی          عاقِل ونادان آخِر موت ہے

کیا خوشی ہو دل کو چندے زِیست سے     غمزدہ ہے جان آخِر موت ہے

ملکِ فانی میں فنا ہر شے کو ہے              سُن لگا کر کان آخِر موت ہے

بارہا علمیؔ تجھے سمجھا چکے

مان یا مت مان آخِر موت ہے

قَبر کی ڈانٹ

          حضرتِ سیِّدُنا ابُوالْحَجّاج ثمالِی رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے ،     سرکارِ مدینہ ،     سلطانِ باقرینہ ،     قرارِ قلب وسینہ ،     فیض گنجینہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا فرمانِ عبرت نشان ہے :  جب میِّت کو قَبْر میں اُتاردیا جاتاہے تو  قَبْراُس سے خطاب کرتی ہے:  اے آدَمی تیرا ناس ہو!تونے کس لئے مجھے فراموش  (یعنی بُھلا )  کررکھاتھا؟   کیا تجھے اِتنا بھی پتا نہ تھا کہ میں فتنوں کا گھر ہوں ،    تاریکی کا گھر ہوں ،     پھرتُوکس بات پرمجھ پر اَکڑا اَکڑا پھرتاتھا؟   اگر وہ مُردہ نیک بندے کا ہو تو ایک غیبی آوازقَبْرسے کہتی ہے: اے قَبْر !اگر یہ اُن میں سے ہو جو نیکی کا حُکْم کرتے رہے اور برائی سے منْع کرتے رہے تو پھر! (تیرا سُلوک کیا ہوگا؟   )  قَبْر کہتی ہے :  اگر یہ بات ہوتو میں اس کے لئے گلزار بن جاتی ہوں ۔   چُنانچِہ پھر اُس شخص کا بدن نور میں تبدیل ہوجاتا ہے اور اس کی روح ربُّ العٰلمین عَزَّ وَجَلَّ کی بارگاہ کی طرف پرواز کرجاتی ہے۔      (مُسْنَدُ اَبِیْ یَعْلٰی ج۶ ص۶۷ حدیث ۶۸۳۵)

مُبلِّغوں کومبارک ہو!

           میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو ! اس حدیثِ پاک پر ذرا غور توفرمائیے کہ جب بھی کوئی قبر میں جاتا ہے چاہے وہ نیک ہو یا بد اسکو قبر میں



[1]     یہ بیان امیراہلسنت حضرت علامہ مولانہ ابو بلال محمد الیاس عطّار قادری رضوی دامت برکاتہم العالیہ نے تبلیغِ قراٰن و سنت کی عالمگیر غیر سیا سی تحریک دعوت اسلامی ۱۴۱۶ھ کے تین روزہ سنّتوں بھرے اجتماع مدینۃ اولیاءملتان شریف  میں فرمایا ۔    مجلس مکتبۃ المدینہ



Total Pages: 12

Go To