Book Name:Halal Tariqay Say Kamanay Kay 50 Madani Phool

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللہِ مِنَ الشَیْطٰنِ الرَّجِیْم ؕبِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْمؕ

حلال طریقے سے کمانے کے 50 مدنی پھول

شیطٰن لاکھ  روکے مگر  یہ رسالہ  (22صَفْحات)  مکمَّل پڑھ کر اپنی آخرت کا بھلا کیجئے۔

دُ رُود شریف کی فضیلت

       امیرُالْمُؤمِنِینحضرتِ سیِّدُنا ابو بکر صِدّیقرَضِیَ اللَّہُ تَعَالٰی عَنْہُسے روایت ہے کہ نبیِّ کریم ،   رَء ُوْفٌ رَّحیمعَلَیْہِ اَفْضَلُ الصَّلٰوۃِ وَالتَّسْلِیْمپر دُرُودِ پاک پڑھنا گناہوں کو اِس قَدَر جلد مِٹاتاہے کہ پانی بھی آگ کو اُتنی جلدی نہیں بجھاتااورنبیصَلَّی اللّٰہُ تَعَا لٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمپر سلام بھیجنا گردنیں  (یعنی غُلاموں کو) آزاد کرنے سے افضل ہے۔   (تاریخِ بغداد  ج۷  ص ۱۷۲ )

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                               صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

     میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!جس کوملازِم رکھنا ہے اُسے ملازِم رکھنے کے اورجس کو ملازَمت کرنی ہے اُسے ملازَمت کے ضَروری اَحْکام جاننے فرض ہیں۔ اگر حسبِ حال نہیں سیکھے گا تو گنہگار اور عذابِ نار کا حقدار ہو گا اورنہ جاننے کی وجہ سے باربار گناہوں کا اِبتِلا مزید بَرآں (یعنی اِس کے علاوہ) ۔  اس رسالے میں صِرْف چیدہ چیدہ مسائل درج کئے گئے ہیں مزید معلومات کیلئے’’  بہارِ شریعت ‘‘ جلد3 صَفْحَہ  104 تا 184پر’’ اِجار ہ کابیان‘‘  پڑھلیجئے۔  پہلے حلال روزی کی فضیلت اور حرام روزی کی تباہ کاریاں مختصراً پیش کی جاتی ہیں،  اللہ تبارَکَ وَتعالٰی 12ویں پارے کی پہلی آیت میں ارشادفرماتا ہے:

وَ مَا مِنْ دَآبَّةٍ فِی الْاَرْضِ اِلَّا عَلَى اللّٰهِ رِزْقُهَا

ترجَمۂ کنزالایمان:  اور زمین پر چلنے والاکوئی ایسا نہیں جس کا رِزْق اللہ کے ذمّۂ کرم پر نہ ہو ۔

   مُفَسِّرِشہیر حکیمُ الْاُمَّت حضر  تِ مفتی احمد یار خانعَلَیْہِ رَحمَۃُ الْحَنَّان’’ نورُالعرفان ‘‘  میں فرماتے ہیں: زمین پرچلنے والے کا اِس لئے ذِکر فرمایا کہ ہم کوانہیں کا مُشاہَدہ ہوتا ہے (یعنی نظر آتے ہیں)   ورنہ جِنّات وغیرہ کو (بھی) ربّ  (عزوجل )   (ہی)  روزی دیتا ہے۔ اس کی رزّاقِیّت صِرْ ف حیوانوں میںمُنْحَصِر نہیں،  پھر جو جس روزی کے لائق ہے اُس کو وُہی ملتی ہے۔  بچّے کو ماں کے پیٹ میں اَور قسم کی روزی ملتی ہے اورپیدائش کے بعد دانت نکلنے سے پہلے اورطرح کی ،  بڑے ہو کراورطرح کی۔  (نور العرفان ص ۳۵۳بتَغَیُّر قَلِیل)

حلال روزی کے بارے میں 5فرامین مصطَفٰےصلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم

 {1} سب سے زیادہ پاکیزہ کھاناوہ ہے جواپنی کمائی سے کھاؤ ([1])  {2} بے شکاللہ تعالٰی مسلمان پیشہ ور کو دوست رکھتا ہے ([2])  {3} جسے مزدوری سے تھک کر شام آئے اُس کی وہ شام ،  شامِ مغفِرت ہو ([3])   {4} پاک کمائی والے کے لئے جنّت ہے ([4])  {5}  کچھ گناہ ایسے ہیں جن کاکَفّارہ نہ نَماز ہو نہ روزے نہ حج نہ عمرہ ۔  ان کاکفّارہ وہ پریشانیاں ہوتی ہیں جوآدمی کوتلاشِ مَعاشِ حلال میں پہنچتی ہیں۔   ([5])

 لقمۂ حلال کی فضیلت

 



[1]     تِرمِذی ج۳ص۷۶ حدیث۱۳۶۳

[2]    مُعْجَم اَوسَط ج۶ص۳۲۷حدیث۸۹۳۴  

[3]     ایضاً ج ۵ ص ۳۳۷ حدیث ۷۵۲۰  

[4]    معجم کبیر ج۵ ص۷۲حدیث۴۶۱۶   

[5]     ایضاً ج۱ص۴۲حدیث۱۰۲،فتاویٰ رضویہ ج۲۹ ص ۳۱۴تا ۳۱۷



Total Pages: 9

Go To