Book Name:Quran-e-Pak Aur Naat-e-Mustafa

(4)قیامت تک کے ایمان لانے والے،ایمان نہ لانےوالے اور منافق سب حضور صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمکے علم میں ہیں۔ (شانِ حبیب الرحمان، ص۵۴،۵۵  ماخوذاً)

اِمامِ اہلسنت،عاشقِ ماہِ رِسالت، اِمام احمد رضاخان رَحْمَۃُ اللہِ عَلَیْہ اپنے نعتیہ دِیوانحدائقِ بخششمیں لکھتے ہیں:

کہنا نہ کہنے والے تھے جب سے تو اطلاع                          مولیٰ کو قول و قائل و ہر خشک و تر کی ہے

اُن پر کتاب اُتری بَیَانًا لِّکُلِّ شَیئ                                                                                                 تفصیل جس میں مَا عَبَر و مَا غَبَر کی ہے

                                                                             (حدائق بخشش، ص۲۱۳)

اشعار کا خلاصہ:یعنی ہمارے آقا صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی شان یہ ہے کہ بات کرنے والے نے بات نہیں کی تھی مگر آقا کریم صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کو اس بات کی بھی پہلے سے خبر تھی اور بات کرنے والے سے بھی  واقف تھے، آپ کی شان یہ ہے کہ کائنات کے ہر خشک و تر کو جانتے ہیں۔  اور اللہکریم نے انہیں قرآنِ پاک کی صورت میں ایسی عظیم کتاب عطا فرمائی ہے  کہ جس میں ہر شے کا واضح بیان موجود ہے ۔

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                               صَلَّی اللّٰہُ عَلٰی مُحَمَّد

حضورصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کاحکم ماننا فرض ہے

            پیارے پیارے اسلامی بھائیو! آئیے! ایک اورواقعہ، آیتِ کریمہ، شانِ نزول اور تفسیر کے ساتھ سنتے ہیں:

            اہلِ مدینہ پہاڑ سے آنے والے پانی سے باغوں میں آبپاشی کرتے تھے۔ وہاں ایک انصاری کا حضرت زبیر رَضِیَ اللہُ عَنْہُ سے جھگڑا ہوا کہ کون پہلے اپنے کھیت کو پانی دے گا۔ یہ معاملہ حبیب ِ کریم صَلَّی اللّٰہُ