اے خالق و مالک رب عُلی/ہم خاک ہیں اور خاک ہی ماوا ہے ہمارا/یقیناً منبع خوف خدا

اے خالق و مالکِ ربِّ عُلٰی

اے خالق و مالک ربِّ عُلٰی سُبْحٰنَ اللہ سُبْحٰنَ اللہ

تُو رب ہے میرا میں بندہ تیرا  سُبْحٰنَ اللہ سُبْحٰنَ اللہ

ہم منگتے ہیں تُو مُعۡطِیۡ ہے ہم بندے ہیں تُو مولیٰ ہے

محتاج تیرا ہر شاہ و گدا سُبْحٰنَ اللہ سُبْحٰنَ اللہ

ہم جرم کریں تُو عَفۡو کرے ہم قہر کریں تو مَہۡر کرے

گھیرے ہے جہاں کو فضل تیرا  سُبْحٰنَ اللہ سُبْحٰنَ اللہ

تُو والی ہے ہر بیکس کا تُو حامی ہے ہر بے بس کا

ہر اک کے لئے در تیرا کھلا سُبْحٰنَ اللہ سُبْحٰنَ اللہ

ہم عیبی ہیں ستّار ہے تُو ہم مجرم ہیں غفّار ہے تُو

بدکاروں پر بھی ایسی عطا  سُبْحٰنَ اللہ سُبْحٰنَ اللہ

تیرے عشق میں روئے مرغِ سحر،تیرا نام ہے مرہمِ زخمِ جگر

تیرے نام پہ میری جان فدا  سُبْحٰنَ اللہ سُبْحٰنَ اللہ

یہ سالِک مجرم آیا ہے اور خالی جھولی لایا ہے

دے صدقہ رحمتِ عالم کا  سُبْحٰنَ اللہ سُبْحٰنَ اللہ


(دیوانِ سالِک اَز مفتی احمدیارخان نعیمی  عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہ ِالْغَنِی ،ص3)

 

 

ہم خاک ہیں اور خاک ہی مَاواہے ہمارا

ہم خاک ہیں اور خاک ہی مَاواہے ہمارا

خاکی تو وہ آدم جَدِ اعلیٰ ہے ہمارا

جس خاک پہ رکھتے تھے قدم سَیِّدِ عالَم

اُس خاک پہ قرباں دلِ شیدا ہے ہمارا

خم ہوگئی پُشتِ فَلَک اس طَعنِ زمیں سے

سُن ہم پہ مدینہ ہےوہ رتبہ ہے ہمارا

اُس نے لقبِ خاک شہنشاہ سے پایا

جو حیدرِ کرّار کہ مولیٰ ہے ہمارا

ہے خاک سے تعمیر مزارِ شہِ کونین

معمور اِسی خاک سے قبلہ ہے ہمارا

ہم خاک اڑائیں گے جو وہ خاک نہ پائی

آباد رضا جس پہ مدینہ ہے ہمارا

(حدائقِ بخشش، از اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خان عَلَیْہِ رَحمَۃُ الرَّحْمٰن  ص32)

 

 

یقیناً مَنبعِ خوفِ خدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

یقیناً مَنبعِ خوفِ خدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

حقیقی عاشقِ خیرُالورٰی صِدِّیقِ اکبر ہیں

نِہایت مُتَّقی و پارسا صِدِّیقِ اکبر ہیں

تقی ہیں بلکہ شاہِ اَتقیا صِدِّیقِ اکبر ہیں

امیرُ المؤمنیں ہیں آپ، اِمامُ الْمُسْلِمیں ہیں آپ

نبی نے جنّتی جن کو کہا صِدِّیقِ اکبر ہیں

خدا ئے پاک کی رحمت سے انسانوں میں ہر اِک سے

فُزوں تر بعد از کُل انبیا صِدِّیقِ اکبر ہیں

گناہوں کے مَرَض نے نیم جاں ہے کر دیا مجھ کو

طبیب اب بس مِرے تو آپ یاصِدِّیقِ اکبر ہیں

نہ گھبراؤ گنہگارو تمہارے حَشْر میں حامی

محبِّ شافِعِ روزِ جزا صِدِّیقِ اکبر ہیں

نہ ڈر عطّارؔ آفت سے خدا کی خاص رحمت سے

نبی والی تِرے، مُشْکِلْکُشا صِدِّیقِ اکبر ہیں

(وسائلِ بخشش از امیرِ اہل سنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  ،ص565)

 

 

 

 

Share

Articles

Comments


Security Code