Book Name:Tamam Dinon ka Sardar

پہلے اِ سے پڑھ لیجیے!

اَلْحَمْدُ لِلّٰہ   عَزَّوَجَلَّ    تبلیغِ قرآن وسنت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک دعوتِ اسلامی کے بانی، شیخِ طریقت، امیرِاہلسنّت حضرت علّامہ مولانا ابو بلال  محمّد الیا س عطاؔر قادری رضوی ضیائی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے اپنے مخصوص انداز میں سنتوں بھر ے بیانات ، عِلْم وحکمت سے معمور مَدَ نی مذاکرات اور اپنے تربیت یافتہ مبلغین کے ذَریعے تھوڑے ہی عرصے میں لاکھوں مسلمانوں کے دلوں میں مدنی انقلاب برپا کر دیا ہے، آپدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہکی صحبت سے فائدہ اُٹھاتے  ہوئے کثیر اسلامی بھائی وقتاً فوقتاً مختلف مقامات پر ہونے والے مَدَنی مذاکرات میں مختلف قسم کے موضوعات  مثلاً عقائدو اعمال، فضائل و مناقب ، شریعت و طریقت، تاریخ و سیرت ، سائنس و طِبّ، اخلاقیات و اِسلامی معلومات، روزمرہ معاملات اور دیگر بہت سے موضوعات سے متعلق سُوالات کرتے ہیں اور شیخِ طریقت امیر اہلسنّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہانہیں حکمت آموز  اور  عشقِ رسول میں ڈوبے ہوئے جوابات سے نوازتے ہیں۔  

امیرِاہلسنّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کے ان عطاکردہ دلچسپ اور علم و حکمت سے لبریز  مَدَنی پھولوں کی خوشبوؤں سے دنیا بھرکے مسلمانوں کو مہکانے کے مقدّس جذبے کے تحت  المدینۃ العلمیہ کا شعبہ’’ فیضانِ مدنی مذاکرہ‘‘ ان مَدَنی مذاکرات کو کافی  ترامیم و اضافوں  کے ساتھ’’فیضانِ مدنی مذاکرہ‘‘کے نام سے پیش کرنے کی سعادت حاصل کر رہا ہے۔ان تحریری گلدستوں کا مطالعہ کرنے سے اِنْ شَآءَ اللہ   عَزَّوَجَلَّ    عقائد و اعمال اور ظاہر و باطن کی اصلاح، محبت ِالٰہی وعشقِ رسول  کی لازوال دولت کے ساتھ ساتھ مزید حصولِ علمِ دین کا جذبہ بھی بیدار ہوگا۔

اِس رسالے میں جو بھی خوبیاں ہیں یقیناً  ربِّ رحیم   عَزَّوَجَلَّ    اور اس کے محبوبِ کریم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی عطاؤں، اولیائے کرامرَحِمَہُمُ اللّٰہ ُ السَّلَام  کی عنایتوں اور امیراہلسنّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہکی شفقتوں اور پُرخُلوص دعاؤں کا نتیجہ ہیں اور خامیاں ہوں تو  اس میں ہماری غیر ارادی کوتاہی کا دخل ہے۔           

  مجلس  المدینتہ العلمیہ                                                                                                                                                                                                               

                                                                                                                                   شعبہ فیضانِ مدنی مذاکرہ                                                        

 ۶رمضان المبارک ۱۴۳۶ھ/24 جون 2015 ء   

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

تمام دنوں کا سردار

(مع دیگردلچسپ سوال وجواب)

شیطان لاکھ سُستی دِلائے یہ رسالہ(۳۲ صفحات) مکمل پڑھ لیجیے۔

اِنْ شَآءَ اللّٰہ   عَزَّوَجَلَّ    معلومات کا اَنمول خزانہ ہاتھ آئے گا۔

دُرُود شریف کی فضیلت

          رحمتِ عالمیان، مکّی مَدَنی سلطان، سرورِ ذیشان، سردارِ دو جہان، محبوبِ رحمٰنصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فرمانِ تقرب نشان ہے : ”بروزِ قیامت لوگوں میں سے میرے قریب تر وہ ہوگا جس نے دُنیا میں مجھ پر زیادہ دُرُودِ پاک پڑھے ہوں گے۔“ ([1])

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

جمعۃ المبارک کے فضائل

عرض : جمعۃ المبارک کے دن کے کچھ فضائل بیان فرما دیجیےتاکہ جمعۃ المبارک کی عظمت ہمارے دِلوں میں مزید  اُجاگر ہو جائے؟   

اِرشاد : جُمُعۃ المبارک کے بےشمار فضائل ہیں، اللہ   عَزَّ  وَجَلَّ   نے جُمُعہ کے نام کی ایک پوری سورت”سورۃُ الجمعہ“ نازِل فرمائی ہے جو قرآنِ کریم کے اٹھائیسویں پارے میں جگمگا رہی ہے ۔احادیثِ مبارکہ میں اس دن کے بہت فضائل بیان ہوئے ہیں چنانچہ سرکارِمدینہ، راحتِ قلب وسینہ، فیض ِگنجینہ، باعثِ نزولِ سکینہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کا فرمانِ باقرینہ ہے : جُمُعہ کا دن تمام دِنوں کا سردار ہے اوراللہ  عَزَّ وَجَلَّکے نزدیک سب سے بڑا ہے اور وہ اللہ   عَزَّوَجَلَّ    کے نزدیک عِیْدُالْاَضْحٰیاور عِیْدُالْفِطْرسےبڑا ہے، اس میں پانچ خصلتیں ہیں : (۱)اللہ تَعَالٰی نے اِسی میں آدم(عَلٰی نَبِیِّنَا وَعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام)کو پیدا کیا اور(۲)اسی میں انہیں زمین پر اُتارا اور(۳) اسی میں انہیں وفات دی اور(۴)اس میں ایک ساعت ایسی ہے کہ بندہ اُس وقت جس چیز کا سُوال کرے



[1]     تِرمِذی، کتاب الوتر، باب  ما جاء  فی  فضل الصلاة.. .الخ، ۲/ ۲۷، حدیث : ۴۸۴



Total Pages: 8

Go To