Book Name:Masajid kay Aadab

پہلے اِ سے پڑھ لیجیے!

اَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّوَجَلَّ تبلیغِ قرآن وسنت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک دعوتِ اسلامی کے بانی، شیخِ طریقت، امیرِاہلسنّت حضرت علّامہ مولانا ابو بلال  محمّد الیا س عطاؔر قادری رضوی ضیائی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  نے اپنے مخصوص انداز میں سنتوں بھر ے بیانات ، عِلْم وحکمت سے معمور مَدَ نی مذاکرات اور اپنے تربیت یافتہ مبلغین کے ذَریعے تھوڑے ہی عرصے میں لاکھوں مسلمانوں کے دلوں میں مدنی انقلاب برپا کر دیا ہے، آپدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کی صحبت سے فائدہ اُٹھاتے  ہوئے کثیر اسلامی بھائی وقتاً فوقتاً مختلف مقامات پر ہونے والے مَدَنی مذاکرات میں مختلف قسم کے موضوعات  مثلاً عقائدو اعمال، فضائل و مناقب ، شریعت و طریقت، تاریخ و سیرت ، سائنس و طِبّ، اخلاقیات و اِسلامی معلومات، روزمرہ معاملات اور دیگر بہت سے موضوعات سے متعلق سُوالات کرتے ہیں اور شیخِ طریقت امیر اہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ انہیں حکمت آموز  اور  عشقِ رسول میں ڈوبے ہوئے جوابات سے نوازتے ہیں۔  

امیرِاہلسنّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  کے ان عطاکردہ دلچسپ اور علم و حکمت سے لبریز  مَدَنی پھولوں کی خوشبوؤں سے دنیا بھرکے مسلمانوں کو مہکانے کے مقدّس جذبے کے تحت  المدینۃ العلمیہ کا شعبہ ’’ فیضانِ مدنی مذاکرہ‘‘ ان مَدَنی مذاکرات کوکافی ترامیم و اضافوں  کے ساتھ’’ فیضانِ مدنی مذاکرہ‘‘کے نام سے پیش کرنے کی سعادت حاصل کر رہا ہے۔ان تحریری گلدستوں کا مطالعہ کرنے سے اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّوَجَلَّ عقائد و اعمال اور ظاہر و باطن کی اصلاح، محبت ِالٰہی و عشقِ رسول  کی لازوال دولت کے ساتھ ساتھ مزید حصولِ علمِ دین کا جذبہ بھی بیدار ہوگا۔

اِس رسالے میں جو بھی خوبیاں ہیں یقیناً  ربِّ رحیم عَزَّوَجَلَّ اور اس کے محبوبِ کریم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی عطاؤں ، اولیائے کرامرَحِمَہُمُ اللّٰہ ُ السَّلَام کی عنایتوں اور امیراہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  کی شفقتوں اور پُرخُلوص دعاؤں کا نتیجہ ہیں اور خامیاں ہوں تو  اس میں ہماری غیر ارادی کوتاہی کا دخل ہے۔

                                                                                                        مجلس المدینتہ العلمیہ                                                                      

شعبہ فیضانِ مدنی مذاکرہ                                                       

                                                        ۸  جمادی الآخر ۱۴۳۶ھ/29 مارچ 2015 ء

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط                                                                                                                              

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

                                مَساجِد کے آداب

  (مع دیگردلچسپ سُوال وجواب)

شیطان لاکھ سُستی دِلائے یہ رسالہ)۳۶صفحات) مکمل پڑھ لیجیے۔اِنْ شَآءَ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ معلومات کا اَنمول خزانہ ہاتھ آئے گا۔

دُرُود شریف کی فضیلت

   سرکارِ عالی وقار، مدینے کے تاجدار، دوعالم کے مالک ومختار، حبیبِ پروردگار، شفیعِ روزِ شمار، جناب احمدِ مختار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فرمانِ مشکبار ہے : جس نے مجھ پر ایک بار دُرُودِ پاک پڑھااللہ  عَزَّ وَجَلَّ اُس پر دس رحمتیں نازل فرماتا ہے اور جو مجھ پر دس مرتبہ دُرُود ِ پاک پڑھےاللہ  عَزَّ وَجَلَّ اُس پر سو رحمتیں نازل فرماتا ہے اور جو مجھ پرسو مرتبہ دُرُودِ پاک پڑھےاللہ   عَزَّ وَجَلَّ  اُس کی دونوں آنکھوں کے درمیان لکھ دیتا ہے کہ یہ نِفاق اور جہنَّم کی آگ سے آزاد ہے اور اُسے بروزِ قِیامت شُہَداء  کے  ساتھ  رکھے گا۔ ([1])

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد   

مسجِد کاکُوڑا کہاں ڈالا جائے؟

عرض : مسجِد کاکُوڑا کہاں ڈالا جائے؟

ارشاد : مسجِدکا کُوڑا یا مسجِدکی چٹائی کے تِنکے وغیرہ ایسی جگہ پھینکنامَنْع ہے جہاں بے اَدَبی کا اندیشہ ہو چنانچہ حضرت علّامہ علاءُ الدین محمد بن علی حصکفیعَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہ ِ الْقَوِی فرما تے ہیں :  مسجِدکی گھاس اور کُوڑا ، جھاڑ کر کسی ایسی جگہ نہ ڈالیں جس سے اس کی تعظیم میں فرق آئے۔([2])یوں ہی مسجد کی کوئی چیز بوسیدہ  ہوجائے تو اسے خرید کر بھی  بے اَدَبی کی جگہ نہ لگایا جائے جیساکہ میرے آقا اعلیٰ



[1]       مُعْجَمِ اَوسَط، من اسمہ محمد، ۵/ ۲۵۲، حدیث : ۷۲۳۵

[2]       دُرِّمُخْتار، کتاب الطھارة، ۱/ ۳۵۵



Total Pages: 9

Go To