Book Name:بسم اللہ Sharif ki Barkat

اَلْحَمْدُ لِلّٰہ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

اَلصَّلٰوۃُ وَ السَّلَامُ عَلَیْكَ یَا رَسُولَ اللہ                                                       وَعَلٰی اٰلِكَ وَ اَصْحٰبِكَ یَا حَبِیْبَ اللہ

اَلصَّلٰوۃُ وَ السَّلَامُ عَلَیْكَ یَا نَبِیَّ اللہ                                                                        وَعَلٰی اٰلِكَ وَ اَصْحٰبِكَ یَا نُوْرَ اللہ

نَوَیْتُ سُنَّتَ الْاِعْتِکَاف                                    ( ترجمہ : میں نے سُنَّت اعتکاف کی نِیَّت کی )

درودِ پاک کی برکت

حضرتِ سیّدنا حفص رُومی رَحمۃُ اللہ عَلَیْہ  بہت بڑے سردار تھے ، ان کی وفات کے بعد کسی نے خواب میں دیکھ کر پوچھا : مَا فَعَلَ اللہ بِکَ یعنی اللہ پاک نے آپ کے ساتھ کیا مُعامَلہ فرمایا ؟ اُنہوں نے جواب دیا : اللہ پاک نے مجھ پر رحم فرمایا ، میری مغفرت فرما دی اور مجھے جنّت میں داخِل فرمایا۔پوچھا گیا : کس عمل کے سبب ؟ جواب دیا : جب بارگاہِ اِلٰہی میں حاضِر ہوا تو اللہ پاک نے فرشتوں سے میرے گناہوں اور میرے پڑھے گئے دُرُود کا حساب لگانے کا حکم دیا ، جب حساب لگایا گیا تو میرے دُرُود میرے گناہوں سے  زیادہ نکلے تو اللہ پاک نے اِرْشاد فرمایا : اے میرے فرشتو !  اس کی قدرو منزلت تمہارے لئے واضِح ہو گئی ہے ، لہٰذا اس سے مزید حساب مت لو اور اسے جنّت میں لے جاؤ۔ ( [1] )

دُرود اُن پہ بھیجو سلام اُن پہ بھیجو                                                           یہی مؤمنوں سے خدا چاہتا ہے

اگر کوئی اپنا بھلا چاہتا ہے                   اُسے چاہے جس کو خدا چاہتا ہے

صَلُّوْا عَلَی الْحَبیب !                                                صَلَّی اللّٰہُ عَلٰی مُحَمَّد


 

 



[1]...اَلْقَوْلُ الْبَدِیْع ، صفحہ : 124۔