Book Name:Imdaad-e-Mustafa

آئیے!اب ہم جانوروں سے مُتَعَلِّق اِمدادِ مُصْطَفٰے کے دو ایمان اَفروز روحانی واقعات سنتے ہیں:

ہِرنی کی فریاد

حضرت سَیِّدُنازَیْد بن اَرْقَم رَضِیَ اللہُ عَنْہُ فرماتے ہیں کہ ایک مرتبہ میں رَحمتِ عالَم صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَ سَلَّمَ کے ساتھ مدینے کی گلیوں سے گزررہا تھا، ہمارا گزر ایک اَعرابی کے خیمے کے پاس سے ہوا، جس کے ساتھ ایک ہِرْنی بھی  بندھی ہوئی تھی۔ہِرْنیfemale deer)) نے عرض کی:یَارَسُوْلَ اللہ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ! یہ خیمے والا اَعرابی مجھے  شِکار کر کے لے آیا ہے،حالانکہ میرے دو(2)بچے جنگل میں موجود ہیں ،میرے تَھنوں میں دُودھ گاڑھا ہورہا ہے یہ نہ تو مجھے ذَبْح کرتا ہے کہ میں اِس تکلیف سے راحت پاجاؤں اور نہ ہی مجھے چھوڑتا ہے کہ جنگل میں اپنے بچوں کو دُودھ پِلا آؤں۔ہِرْنی کی فریاد سُن کر سَرْوَرِ معصوم،صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا:اگر میں تجھے چھوڑدوں تو کیا پلٹ کرواپس آجائے گی ؟عرض کی: جی ہاں! اگر میں ایسا نہ کروں تو اللہ پاک مجھے (ناجائز) ٹیکس وُصول کرنے والے کا سا عذاب دے۔تو حُضُور صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے اُسے چھوڑدیا،وہ بڑی تیزی وبے قراری سے جنگل کی طرف چلی گئی، ابھی تھوڑی ہی دیر گزری تھی کہ وہ خوشی خوشی واپس آگئی۔آپ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے اُسے خیمے کے ساتھ باند ھ دیا۔ اتنے میں وہ اَعرابی بھی پانی کامشکیزہ اُٹھائے بارگاہ ِرسالت میں حاضر ہو گیا۔نبیِ کریم،رؤف و رحیمصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَ سَلَّمَ نے اُس سے فرمایا:کیا یہ ہِرْنی ہمیں بیچو گے؟اُس نے عَرْض کی:یَا رَسُوْلَ اللہ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ و اٰلِہٖ وَسَلَّمَ!یہ بطورِ ہَدِیَّہ پیشِ خدمت ہے۔ چنانچہ آپ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ہِرْنی کو آزاد فرمادیا۔

 حضرت سَیِّدُنا زَیْد بن اَرْقَم رَضِیَ اللہُ عَنْہُ فرماتے ہیں:اللہ پاک کی قسم! میں نے اُس ہِرْنی کو دیکھا کہ وہ