Book Name:Shan e Sayedatuna Aisha Siddiqa

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَالصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنط

اَمَّا بَعْدُ! فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْم  ط بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْم ط

اَلصَّلٰوۃُ وَ السَّلَامُ عَلَیْكَ یَا رَسُولَ اللہ         وَعَلٰی اٰلِكَ وَ اَصْحٰبِكَ یَا حَبِیْبَ اللہ

اَلصَّلٰوۃُ وَ السَّلَامُ عَلَیْكَ یَا نَبِیَّ اللہ       وَعَلٰی اٰلِكَ وَ اَصْحٰبِكَ یَا نُوْرَ اللہ

نَـوَیْتُ سُنَّتَ الاعْتِکَاف   (ترجَمہ:میں نے سنّتِ اعتکاف کی نیّت کی)

میٹھےمیٹھےاسلامی بھائیو!جب کبھی داخلِ مسجدہوں،یادآنےپر اِعْتِکافکی نِیَّت کرلیا کریں کہ جب تک مسجدمیں رہیں گےاِعْتِکاف کاثَواب مِلتارہےگا۔یادرکھئے !مسجدمیں کھانے،پینے،سونے یا سَحری،اِفطاری کرنے،یہاں تک کہ آبِ زَم زَم یادَم کیاہواپانی پینےکی بھی شَرعاً اِجازت نہیں،اَلبتَّہ اگر اِعْتِکافکی نِیَّت ہوگی تو یہ سب چیزیں ضِمْناًجائزہوجائیں گی۔اِعْتِکاف کی نِیَّت بھی صِرف کھانے،پینے یا سونےکےلئےنہیں ہونی چاہئےبلکہ اِس کامقصداللہکریم کی رِضاہو۔”فتاویٰ شامی“میں ہے:اگر کوئی مسجدمیں کھانا،پینا،سوناچاہےتواِعْتِکافکی نِیَّت کرلے،کچھ دیرذِکْرُاللہ کرے،پھرجوچاہےکرے (یعنی اب چاہے توکھا  پی یا       سو سکتا ہے)

دُرُود شریف کی فضیلت

اُمُّ الْمؤمنین حضرت سیِّدَتُنا عائشہ صدّیقہرَضِیَ اللّٰہ تَعَالٰی عَنْہا سے روایت ہے کہ نبیِّ رَحمت،شفیعِ اُمَّت صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فرمانِ شفاعت نشان ہے:’’مَنْ صَلّٰی عَلَیَّ یَوْمَ الْجُمُعَۃِ  کَانَتْ شَفَاعَۃٌ لَّہٗ عِنْدِیْ یَوْمَ الْقِیَامَۃ۔یعنی جوشخص جُمُعہ کےدن مجھ پر دُرُود شریف پڑھےگاتو بروزِقیامت اس کی شفاعت میرے ذِمَّۂ کرم پرہوگی۔(کنز العمال،کتاب الاذکار،قسم الأقوال،الباب السادس فی الصلاۃ الخ،الجزء الاول ، ۱ /۲۵۵،  حدیث:۲۲۳۶)

اُن پردُرود جن کو کَسِ بے کَساں کہیں        اُن پر سَلام جن کو خَبَر بے خَبَر کی ہے