سب سے اولیٰ و اعلیٰ ہمارا نبی

Image
کسی کے نزدیک جب کوئی فرد معزّز ہوتا ہے تو یقیناً وہ اس کے ساتھ احسان و بھلائی کا معاملہ کرتا اور اسے عزت و اختیارات دیتا ہے ، اس کی عزّت و حرمت کی حفاظت کرتا ہے۔
Image
رسولِ کریم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے جُو دو سخا کا ایک عظیم پہلو غَنا یعنی بے نیازی تھا۔ آپ مال جمع نہیں رکھتے تھے یہی وجہ تھی کہ کبھی آپ پر زکوٰۃ فرض نہ ہوئی
Image
گزشتہ ماہ کے مضمون میں آپ نے پڑھا کہ رسولِ کریم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے قاسمِ نعمت اور صاحبِ جُود و سخاوت ہونے کے موضوع کو چار حصوں میں تقسیم کیا جاسکتاہے
Image
ان مذکور مبارک فرامین میں حضور نبیِّ رحمت ، شفیعِ امّت ، سلطانِ دوجہاں ، غمگسارِ انس و جاں ، محمد مصطفےٰ ، احمد مجتبیٰ صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے دو مبارک اسماء “ قَاسِم “ اور “ اَجْوَد “ کا ذکر ہے۔
Image
حضورنبیِّ رحمت ، خاتمِ نبوّت جناب ِمحمدِ مصطفےٰ احمدِ مجتبیٰ صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے اجرو ثواب ، مقام ومرتبہ ، عظمت و رفعت کا کوئی اندازہ تو کیا ہی نہیں جاسکتا۔
Image
محسنِ انسانیت ، تاجدارِ رسالت ، احمدِ مجتبیٰ ، محمدِ مصطفےٰ صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کی سیرتِ مبارَکہ کا ایک بہت ہی اہم پہلو آپ صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے مغازی ہیں۔
Image
حبیبِ کریم ، خاتمُ النّبیین صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے ان تمام فرامین میں آپ صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کا آخری نبی ہونا اور ہمارا عقیدۂ ختمِ نبوت بیان ہوا ہے۔
Image
امامِ اہلِ سنّت ، حضور سیّدی اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خان حنفی رحمۃُ اللہ علیہ نے نامِ مبارک “ نَبِيُّ التَّوْبَةِ “ کی 13 توجیہات شروحاتِ حديث اور كتبِ سيرت سے جبکہ 4توجیہات اپنی جانب سے ذکر فرمائی ہیں
Image
گزشتہ شمارے میں بتایا گیا تھا کہ حضور نبی رحمت صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کی مبارک رحمت کے بیان کی بنیادی طور پر دو قسمیں کی جاسکتی ہیں :