Book Name:Qurani Talimat Sikhiye Aur Amal Kijiye

بےادبی کا خطرہ نہ ہوتا تو ہم کہتے کہ آپ اپنے غلاموں پر فِدا ہیں۔   

صَلُّوْا عَلَی الْحَبیب!                                                           صَلَّی اللّٰہُ عَلٰی مُحَمَّد

بیان سننے کی نیتیں

حدیثِ پاک میں ہے : اِنَّمَا الْاَعْمَالُ بِالنِّیّات اَعْمَال کا دار ومدار نیتوں پر ہے۔ ([1])

پیارے اسلامی بھائیو! اچھی نیت بندے کو جنّت میں پہنچا دیتی ہے ، بیان سننے سے پہلے کچھ اچھی اچھی نیتیں کر لیجئے! مثلاً نیت کیجئے : * رِضَائے اِلٰہی کے لئے بیان سُنوں گا* عِلْمِ دین سیکھوں گا * پورا بیان سُنوں گا * ادب سے بیٹھوں گا * نصیحت حاصِل کروں گا * اَحْمَدِ مجتبیٰ ، مُحَمَّد مصطفےٰ صَلّی اللہُ عَلَیْہ وآلِہ وسَلَّم کا نامِ پاک سُن کر درودِ پاک پڑھوں گا۔

صَلُّوْا عَلَی الْحَبیب!                                                           صَلَّی اللّٰہُ عَلٰی مُحَمَّد

حضرت جعفر رَضِیَ اللہُ عَنْہ کی پُر سوز تلاوت

پیارے اسلامی بھائیو! ابتدائے اسلام میں جب کُفَّارِ مکہ مسلمانوں پر ظُلْم و ستم کے پہاڑ توڑ رہے تھے ، ایک روز سرکارِ عالی وقار ، مکی مدنی تاجدار صَلّی اللہُ عَلَیْہِ وَآلِہٖ وَسَلَّم نے صحابۂ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان کو ہجرت کر کے حبشہ کی طرف جانے کا حکم فرمایا ، اس حکمِ نبوی کو سُن کرکئی صحابۂ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان حبشہ تشریف لے گئے ، حبشہ میں اُس وقت نجاشی بادشاہ رَحْمَۃُ اللہِ عَلَیْہ کی حکومت تھی ، ایک روز نجاشی بادشاہ رَحْمَۃُ اللہِ عَلَیْہ نے ان صحابۂ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان کو دربارِ شاہِی میں بُلایا ،   صحابۂ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان تشریف لے گئے ، وہاں کُفَّارِ مکہ کا ایک وَفْد بھی موجود تھا اور نجاشی کے درباری بھی موجود تھے ، اس وقت نجاشی بادشاہ رَحْمَۃُ اللہِ عَلَیْہ نے قرآنِ پاک سُنانے کی درخواست پیش کی ، چنانچہ جنتی صحابی حضرت جعفر رَضِیَ اللہُ عَنْہُ  نے


 

 



[1]...بخاری ، کِتَاب : بَدءُ الْوَحی ، صفحہ : 65 ، حدیث : 1۔