Book Name:Siddiq K Liay Khuda Aur Rasool Bus

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

اَلصَّلٰوۃُ وَ السَّلَامُ عَلَیْكَ یَا رَسُولَ اللہ                                                   وَعَلٰی اٰلِكَ وَ اَصْحٰبِكَ یَا حَبِیْبَ اللہ

اَلصَّلٰوۃُ وَ السَّلَامُ عَلَیْكَ یَا نَبِیَّ اللہ                                                               وَعَلٰی اٰلِكَ وَ اَصْحٰبِكَ یَا نُوْرَ اللہ

نَـوَیْتُ سُنَّتَ الاعْتِکَاف   (ترجَمہ : میں نے سنّتِ اعتکاف کی نیّت کی)

پیارے پیارے اسلامی بھائیو ! ہم اللہ پاک کے گھر میں حاضر ہیں یقیناً مسجد میں آنا بڑی سعادت کی بات ہے ۔ مسجد میں داخل ہونے سے برکتیں تو ملتی ہی ہیں لیکن اگر ہم مسجد میں آتے ہی ایک کام کرلیں تو ان برکتوں میں مزید اضافہ ہوسکتا ہے ، وہ کام یہ ہے کہ ہم مسجد میں داخل ہوتے ہی اعتکاف کی نیت کرلیں ، اس سے دو بڑے فائدے حاصل ہوں گے ۔ ایک فائدہ  تو یہ کہ جب  تک مسجد میں رہیں گے ثواب ملتا رہے گا اور دوسرا فائدہ یہ کہ اگر اعتکاف کی نیت ہوگی تو ضمناًمسجد میں کھانا ، پینا ، سونا وغیرہ جائز ہوجائے گا۔

 یاد رکھئے! مسجد میں کھانے ، پینے ، سونے وغیرہ کی شَرعی طور پر  اِجازت نہیں ، لیکن  اگر مسجد میں داخل ہوتے ہی اللہ پاک کی رِضا کے لیے اِعْتِکاف کی نِیَّت کرلیں گے تو اس کی برکت سے یہ سب یعنی کھانا ، پینا ، سونا وغیرہ جائز ہو جائےگا ۔ “ فتاویٰ شامی “  میں ہے : اگرکوئی مسجد میں کھانا ، پینا ، سونا چاہے تو اِعْتِکاف کی نِیَّت کرلے ، کچھ دیر ذِکْرُاللہ کرے ، پھر جو چاہے کرے(یعنی اب چاہے تو کھا  پی یا       سو سکتا ہے)

دُرُودِ پاک  کی فضیلت