Book Name:Yadgari Ummat Pay Lakhoon Salam

سلطانِ مدینہ،راحتِ قلب و سِینہصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمقَبرِانورمیں اپنےلبہائےمُبارَکہ کوجُنبِش فرمارہےتھے(یعنی مُبارَک ہونٹ ہِل رہے تھے)میں نےاپنےکانوں کوپیارےآقاصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ کےدَہَن(یعنی منہ) مُبارَک کےقریب کیا،میں نےسناکہ آپ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ فرماتےتھے :’’ربِّ اُمَّتِی اُمَّتِی‘‘(یعنی پروردِگار!میری اُمّت میری اُمّت)۔(مَدارجُ النُّبُوۃ،۲/۴۴۲)اورفرمانِ مصطَفٰے صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَہے:جب میری وفات ہوجائےگی تواپنی قَبرمیں ہمیشہ پکارتارہوں گا:یاربِّ اُمَّتِی اُمَّتِی یعنی اے پروردگار!میری اُمّت میری اُمّت۔یہاں تک کہ دوسراصُور پھُونکا جائے۔(کنزالعمال،کتاب القیامۃ، ۷/۱۷۸،حدیث:۳۹۱۰۸ )

میرے آقااعلیٰ حضرترَحْمَۃُ اللہِ عَلَیْہبارگاہِ رسالت میں عرض کرتےہیں:

جنہیں مَرقَد میں تا حشر اُمَّتی کہہ کر پکارو گے          ہمیں  بھی یاد کر لو اُن میں صدقہ اپنی رحمت کا

(حدائقِ بخشش،ص۳۹)

مختصر وضاحت:اےہمارے پیارے آقا(صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ)!آپ اپنے مزارِ اقدس میں تاقیامت جنہیں ”اُمّتی“ کہہ کر یاد فرمائیں گے،اپنی رحمت کے صدقے میں  ہمیں بھی ان خوش نصیبوں  میں یادفرمالیجئے۔

(2)مُحدِّثِ اعظم پاکستان نے فرمایا

       مُحدِّثِ اعظم پاکستان حضرت علّامہ مولاناسردار احمدرَحْمَۃُ اللّٰہ عَلَیْہفرمایاکرتےتھےکہ حُضُورِ پاک صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَتوساری عمرہمیں اُمَّتی اُمَّتیکہہ کریادفرماتےرہے،قبر ِانورمیں  بھی اُمَّتی اُمَّتی   فرما رہے ہیں  اورحشر تک فرماتے رہیں  گےیہاں  تک کہ محشر کے روز بھی اُمَّتی اُمَّتی فرمائیں گے ۔ حق یہ ہےکہ اگرصِرف ایک باربھی اُمّتی فرمادیتےاورہم ساری زندگییانبی یانبی،یارسولَاللہ،یاحبیبَ اللہکہتے تب بھی اُس ایک باراُمّتی کہنے کا حق ادا نہیں  ہو سکتا۔(عاشقِ اکبر، ص ۵۳)