Book Name:Mazarat e Auliya ki Hikayaat

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط                                                                                    

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط                                                 

ہوسکتا ہے  شیطٰن آپ کو یہ رِسالہ( 48صفحات)  مکمَّل  پڑھنے سے  روک دے مگر

آپ پڑھ  لیجئے  اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ  وَجَلَّ  آپ کی معلومات میں اضافہ ہوگا

560قبروں سے عذاب اُٹھ گیا

                 ایک عورت نے مشہور ولیُّ اللہ حضرتِ سیِّدُنا حَسَن بَصری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہ ِالْقَوِی کی خدمتِ بابَرَکت میں حاضِر ہو کر عَرض کی :  میری جوان بیٹی فوت ہوگئی ہے، کوئی طریقہ اِرشاد ہو کہ میں اُسے خواب میں دیکھ لوں ۔ آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِنے اُسے عمل بتا دیا ۔اُس نے اپنی مرحومہ بیٹی کو خواب میں تو دیکھا، مگر اِس حال میں کہ اُس کے بدن پر تارکَول (یعنی ڈامَر) کا لباس، گردن میں زنجیر اور پاؤں میں بَیڑیاں تھیں !یہ ہَیبتناک منظر دیکھ کر وہ عورت کانپ اُٹھی! اُس نے دوسرے دن یہ خواب حضرتِ سیِّدُنا حسن بصری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہ ِالْقَوِی کو سنایا ، سن کرآپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِبَہُت مَغْمُوم ہوئے ۔کچھ عرصے بعد حضرت ِ سیِّدُنا حسن بصری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہ ِالْقَوِی  نے خواب میں ایک لڑکی کو دیکھا، جو جنّت میں ایک تَخْت پر اپنے سر پر تاج سجائے بیٹھی ہے ۔ آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِکو دیکھ کر وہ کہنے لگی :  ’’میں اُسی خاتون کی بیٹی ہوں ، جس نے آپ کو میری حالت بتائی تھی۔ ‘‘آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِنے فرمایا : اُس کے بَقَول تو تُو عذاب میں تھی، آخِر یہ انقِلاب کس طرح آیا؟ مرحومہ بولی :  قبرِستان کے قریب سے ایک شخص گزرا اور اس نے مصطَفٰے جانِ رَحمت، شمعِ بزمِ ہدایت صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَپر دُرُود بھیجا، اُس کے دُرُود شریف پڑھنے کی بَرَکت سے اللہ عَزَّوَجَلَّنے ہم 560 قَبْر والوں سے عذاب اُٹھالیا۔

                                                                                                                             (التذکرۃ فی احوال الموتٰی واُمور الآخرۃ ج۱ص۷۴ماخوذاً)

        میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! مَعلوم ہُوا، دُرُود شریف کی بڑی بَرَکت ہے۔جب بھی کسی قبرستان کے قریب سے گزر ہویاد کرکے تِرمِذی شریف میں بیان کردہ یہ سلام کہہ لیجئے :          اَلسَّلامُ عَلَیْکُمْ یَا اَھْلَ الْقُبُوْرِ یَغْفِرُ اللہُ لَنَا وَلَکُمْ اَنْتُمْ سَلَفُنَاوَنَحنُ بِالْاَثَر

 ترجَمہ : ’’اےقَبْر والو! تم پر سلام ہو، اللہ عَزَّوَجَلَّ ہماری اور تمہاری مغفرت فرمائے، تم ہم سے پہلے آگئے اور ہم تمہارے بعد آنے والے ہیں ۔‘‘

 



Total Pages: 19

Go To