Book Name:Noor Wala Aaya hay

جو بھی ہے ’’قافِلوں ([1] ‘‘   کا شَیدائی                          قابلِ احترام ہوتا ہے

جو بھی رہتا ہے ’’مَدَنی حُلیے‘‘ میں                                   قابلِ احترام ہوتا ہے

سنّتیں اُن کی  جو  بھی اپنائے                                       حشر میں شاد کام ہوتا ہے

درسِ فیضانِ سنّت اے بھائی                                       گھر میں دینے سے کام ہوتا ہے

بِھیڑ میں جیسے حجَرِ اَسوَد کا                                           دُور سے اِستِلام ہوتا ہے

یوں ہی عُشّاق کا وطن رہ کر                                         دُور سے بھی سلام ہوتا ہے

ہائے دُوری کو ہو گیا عرصہ                                         کب یہ  حاضِر غلام ہوتا ہے

کب مدینے میں حاضِری ہو گی                          جانے کب میرا کام ہوتا ہے

یا نبی یہ غلام کب حاضِر                                           بہرِ عرضِ سلام ہوتا ہے

جو مدینے کے غم میں روئے وہ                                  حشر میں شاد کام ہوتا ہے

جو دُرُود و سلام پڑھتے ہیں                                       اُن پہ رب کا سلام  ہوتا ہے

کیا دبے دُشمنوں سے وہ حامی                                    جس کا خیرُ الانام ہوتا ہے

اُس کی دُنیا میں آزمائِش ہے                                     جو یہاں نیک نام ہوتا ہے

جو ہو اللہ    کا ولی اُس کا                                              فیض دنیا میں عام ہوتا ہے

جی لگانے کی جا نہیں دنیا                                          کس کو حاصِل دَوام  ہوتا ہے

دارِفانی میں خوش رہے کیسے!                                   جس کامُردوں میں نام ہوتا ہے

موت  ایماں پہ آتی ہے جس پر                                  فضلِ ربُّ الانام ہوتا ہے

قبر روشن اُسی کی ہو جس پر                                      فضلِ ربُّ الانام ہوتا ہے

بے حساب بخشِش اُس کی ہوجس پر                                 فضلِ ربُّ الاَنام ہوتا ہے

بختور ہے مدینے میں جس کی                                    عُمر کا اختتام ہوتا ہے

جس سے وہ خوش ہوں حشرمیں حاصل                              اُس کو کوثر کا جام ہوتا ہے

دیکھو عطارؔ کب مِرا طیبہ

جانے والوں میں نام ہوتا ہے

یا علیَّ المرتَضٰی مولٰی علی مشکل کُشا

 (یہ کلام ۸ ربیع الغوث۱۴۳۲ھ کو موزوں کیا) 

یا علیَّ المرتَضیٰ مولیٰ علی مشکلکُشا

آپ ہیں شیرِ خدا مولیٰ علی مشکلکُشا

صاحِبِ لُطف و عطا مولیٰ علی مشکلکُشا

ہیں شہیدِ با وفا مولیٰ علی مشکلکُشا

علم کا میں شہر ہوں دروازہ اِس کا ہیں  علی

ہے یہ قَولِ مصطَفٰے  ([2]مولیٰ علی مشکلکُشا

جس کسی کا میں  ہوں مولیٰ  اُس کے مولیٰ ہیں علی

ہے یہ قولِ مصطَفٰے  ([3])  مولیٰ علی مشکلکُشا

پیکرِ خوفِ خدا  اے عاشقِ خیرُ الورٰی

 



[1]     یعنی دعوتِ اسلامی کے سنتوں کی تربیت کے مَدَنی قافِلے۔    

[2]     اَنَا مدِینَۃُ الْعِلْمِ وعَلِیٌّ بَابُہا۔    یعنی میں علم کا شہر ہوں اور علی اُس کا دروازہ ہیں ۔     (اَلْمُعْجَمُ الْکبِیرج۱۱ص۵۵حدیث۱۱۰۶۱)  

[3]     مَنْ کُنْتُ مَوْلَاہُ فَعَلِیٌّ مَوْلَاہُ۔    یعنی جس کا میں مولیٰ ہوں علی بھی اُس کے مولیٰ ہیں ۔     ( تِرمِذی ج۵ ص۳۹۸ حدیث۳۷۳۳)

 



Total Pages: 9

Go To