Book Name:Noor Wala Aaya hay

سرکار!  مجھے نَزع میں مت چھوڑنا تنہا

تم آکے  مجھے سورۂ یاسین سنانا

جب گورِ غریباں کو چلے میرا جنازہ

رَحمت کی رِدا اس پہ خدارا تم اُڑھانا

جب قبر میں اَحباب چلیں مجھ کو لِٹا کر

اے پیارے نبی گور کی وَحشت سے بچانا

طے خیرسے تدفین کے ہوں سارے مَراحِل

ہو قبر کا بھی لطف سے آسان دَبانا

جس  وَقت نکیرین کریں آ کے سُوالات

سرکار!  تم آ کر کے جوابات سکھانا

سُن رکھا ہے ہوتا ہے بڑا سخت اندھیرا

تُربت میں مِری نُور کا فانوس جلانا

جب قبر کی تنہائی میں گھبرائے مِرا دل

دینے کو دِلاسہ شہِ والا ضَرور آنا

جب روزِ قیامت ہو شہا میل پہ سُورج

کوثر کا چھلکتا مجھے اِک جام پلانا

ہو عرصۂ محشر میں مِرا چاک نہ پردہ

لِلّٰہ  مجھے  دامنِ  رَحمت  میں  چُھپانا

مَحشر میں حساب آہ! میں دے ہی نہ سکوں گا

رَحمت نہ ہوئی ہوگا جہنَّم میں ٹھکانا

فرمائیں گے جس وَقت غلاموں کی شفاعت

میں بھی ہوں غلام آپ کا مجھ کو نہ بُھلانا

فرما کے شَفاعت مِری اے شافِعِ محشر!

دوزخ سے بچا کر مجھے جنت میں بسانا

یا شاہِ مدینہ!   مہِ رَمَضان کا  صَدقہ

جنت میں پڑوسی مجھے تم اپنا بنانا

اللہ کی رَحمت سے یہ مایوس نہیں ہے

ہو جائیگا عطّارؔ کی بخشش کا بہانہ

جو نبی کا غلام ہو تا ہے

 (۲۹ ربیع الغوث ۱۴۳۲ھ ۔  بمطابق4- 4-2011 ) 

جو نبی کا غلام ہوتا  ہے                                               قابلِ احترام ہوتا ہے

جو کہ خوفِ خدا سے روتاہے                                       قابلِ احترام ہوتا ہے

جو غمِ مصطَفٰے میں روتا ہے                                           قابلِ احترام ہوتا ہے

جو بُرے خاتمے سے ڈرتا ہے                                       قابلِ احترام ہوتا ہے

جودے نیکی کی دعوت اے بھائی                                  قابلِ احترام ہوتا ہے

جو بھی اپنائے ’’مَدَنی اِنعامات‘‘                                    قابلِ احترام ہوتا ہے

 



Total Pages: 9

Go To