Book Name:Noor Wala Aaya hay

دل سے چاہَت مِٹا ماسِوا ([1]کی                                           میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

اَزپئے غوثِ اعظم ولایت                                              اپنی رَحمت سے فرما عنایت

اپنی،    اپنے نبی کی وِلا کی                                                  میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

حال عاصی کا بے حد بُرا ہے                                               تیری رَحمت کا بس آسرا ہے

عَفوِ  جُرم و قُصُور و خطا کی                                                   میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

میں گناہوں میں لتھڑا ہوا ہوں                                          بد سے بدتر ہوں بگڑا ہوا ہوں

عَفوِ جُرم و قُصُور و خطا کی                                                   میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

ہے یہ تسلیم سب سے بُرا ہوں                                            میں سُدھرنا  خدا چاہتا ہوں

عَفوِ جُرم و قُصُور و خطا کی                                                   میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

ہو کرم بہرِ شاہِ مدینہ                                                      کر کے توبہ پھروں میں کبھی نہ

عَفوِ جُرم و قُصُور و خطا کی                                                   میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

بات عِصیاں سے میں نے بگاڑی                                             دل کی ہاتھوں سے بستی اُجاڑی

لُطف و رَحمت کی عَفو ([2]و عطا کی                                       میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

تیرے ڈر سے سدا تھر تھراؤں                             خوف سے تیرے آنسو بہاؤں

کیف ایسا دے،    ایسی ادا کی                                         میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

مکرِ شیطان سے تو بچانا                                                ساتھ ایماں کے مجھ کو اٹھانا

نَزع میں دیدِ بدرُ الدُّجیٰ کی                                          میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

پھر عرب کی حسیں وادیاں ہوں                                   کاش!  مکّے کی شادابیاں ہوں

مجھ کو دیدارِ ثور و حِرا کی                                             میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

دیدے پردہ بہو بیٹیوں کو                                           ماؤں بہنوں سبھی عورَتوں کو

ہم سبھی کو حقیقی حیا کی                                               میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

اب تک اولادسے جو ہیں محروم                                    اُن کی بھر گود اے ربِّ قَیُّوم

سب کو رحمت کی اپنی عطاکی                                        میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

جگمگاتی رہے قبرِ عطّارؔ                                                ربِّ حنّان و منّان و غفّار !

تا ابد فَضل و رَحم  و عطا کی                                                        میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

{۲} میرے مولیٰ تُو خیرات دیدے

 (۱۶ محرم الحرم ۱۴۳۳ھ۔  بمطابق12-12-2011) 

یا الٰہی!  دُعا ہے گدا کی                                   میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

جلوۂ سرورِ انبیا کی                                         میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

سبز گنبد کی مہکی فضا کی                                    دیدِ دربارِ خیرالورٰی کی

باغِ طیبہ کی ٹھنڈی ہوا کی                                میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

بھیک دے الفتِ مصطَفٰے کی                              سب صَحابہ کی آلِ عَبا ([3])    کی

غوث و خواجہ کی احمد  رضا کی                            میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

کوئی حج کاسبب اب بنا دے                             مجھ کو کعبے کاجلوہ دکھادے

 



[1]     خاص اصطلاح کے اعتبار سے ہر وہ چیز جو خدا سے دور لیجانے والی ہے اُسے ماسوا کہتے ہیں ۔    

[2]     مُعافی

[3]     سیِّدُنا علی،  سیّدتنا بی بی فاطِمہ،   سیِّدُنا امام حسن اور سیِّدُنا امام حسین علیہم الرّضوان کو  ’’ آ لِ عَبا ‘‘   کہتے ہیں ۔    

 



Total Pages: 9

Go To