Book Name:Naik Bannay aur Bananay kay Tariqay

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  اس  ’’  مدنی انعام  ‘‘  کی رو سے نمازیں بھی مسجد ہی میں ادا کرنی ہیں اور مسجد کو جاناسُبْحٰنَ  اللّٰہ عَزَّوَجَلّ!

           حضرت سیدنا ابو ہریرہ   رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے کہ محبوبِ رَبُّ الْعٰلَمِین ، رَحْمَۃٌ لِّلْعٰلمین،جنابِ صادق وامین    صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علیہ واٰلہ وسلَّم نے ارشاد فرمایا:  ’’ جو صبح یا شام کو مسجد میں آئے،اللّٰہ تعالٰی اس کے لئے جنت میں ایک ضیافت تیار فرمائے گا۔ ‘‘ (صحیح المسلم ، کتاب المساجد۔۔۔الخ،باب المشی الی الصلاۃ۔۔۔الخ، الحدیث: ۲۸۵۔(۶۶۹)،ص۳۳۶)

          پہلی صف بھی  ’’  مدنی انعام ‘‘  میں موجود ہے سرکار ِمکۃُالمکرمہ ، سردارِ مدینۃالمنورَّہ صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علیہ واٰلہ وسلَّمفرماتے ہیں : ’’ لوگ اگر جانتے کہ اذان اور پہلی صف میں کیا ہے تو بغیر قرعہ ڈالے نہ پاتے لہٰذا اس کے لئے قرعہ اندازی کرتے۔ ‘‘   (صحیح المسلم ، کتاب الصلاۃ،باب تسویۃ الصفوف۔۔۔الخ، الحدیث:۱۲۹۔ (۴۳۷)،ص۲۳۱)

            ایک اور روایت میں ہے کہ رحمتِ عالم، نور مجسم ، شاہِ بنی آدم صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علیہ واٰلہ وسلَّمکا فرمانِ رحمت نشان ہے: ’’   اللہ   عَزَّوَجَلَّاور اسکے فرشتے پہلی صف پر درود (یعنی رحمت)بھیجتے ہیں ، صحابہ کرامعلیہم الرضوان نے پھر عرض کی یارَسو لَ اللّٰہ!   صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علیہ واٰلہ وسلَّماور دوسری پر بھی؟  فرمایا ، دوسری پر بھی۔مزید ارشاد فرمایا:  ’’ صفوں کو برابر کرو اور کندھوں کو مقابل (یعنی ایک سیدھ میں )کرو، اپنے بھائیوں کے ہاتھوں میں نرم ہو جاؤ  اور کشادگیوں (یعنی صف کی خالی جگہوں )کو بند کرو کہ شیطان  بھیڑ کے بچے کی طرح تمھارے بیچ میں داخل ہوجاتا ہے۔ ‘‘  (المسند للامام احمد، حدیث أبی أمامۃ الباھلی، الحدیث:۲۲۳۲۶،ج ۸،ص۲۹)

                 میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! جب ایک مدنی انعام کی ایسی بہار یں ہیں تو بقیہ مدنی انعامات پر عمل کرنے سے کیسی برکتیں حاصل ہوں گی۔لہٰذا تمام اسلامی بھائی  نیت فر مالیجئے :  اللہ  عَزَّ وَجَلَّ آئندہ زندگی کے شب و روز مدنی انعامات کی خوشبوؤ ں سے معطر رکھنے کی کوشش کریں گے۔  اللہ   عَزَّ وَجَلَّ    میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  امیر اہلسنّت  دامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعالِیَہ  فرماتے ہیں : ہو سکتا ہے آپ میں سے کسی کو میرے  ’’  مدنی انعام ‘‘  مشکل معلوم ہوں مگر ہمت نہ ہاریں ، منقول ہے کہ ’’ اَفْضَلُ الْعِبَادَۃِ اَحْمَزُھا یعنی  ’’ افضل ترین عبادت وہ ہے جس میں زحمت زیادہ ہو۔ ‘‘ (کشف الخفائ،الحدیث:۳۵۹،ج۱،ص۱۴۱)

             سیدنا ابراہیم بن اَدھَم علیہ رَحمَۃُ اللّٰہ الاکرم فرماتے ہیں : ’’ دنیا میں جو عمل جتنا دُشوار ہوگابروزِ قیامت میزانِ عمل میں وہ اتنا ہی وزن دار ہوگا ‘‘ (تذکرۃالاولیاء ص۹۵)

            امیر اہلسنّت  دامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعالِیَہ فرماتے ہیں کہجب آپ عمل شروع کر دیں گے تو وہ آپ کیلئے  اللہ   عَزَّ وَجَلَّ  آسان ہوجائے گا۔غالباََ آپ کو تجربہ ہوگا کہ سخت سردی کے وقت وضو کیلئے بیٹھتے ہیں تو سردی سے دانت بجتے ہیں پھر ہمت کرکے جب وضو شروع کردیتے ہیں تو ابتدائً    ٹھنڈک زیادہ محسوس ہوتی ہے اور پھر بتدریج کم ہوجاتی ہے۔ ہر مشکل کام کا یہی اصول ہے۔مثلاََ کسی کو کوئی مہلک بیماری لگ جائے تو وہ بے چین ہوجاتا ہے پھر رفتہ رفتہ جب عادی ہوجاتا ہے تو قوت برداشت بھی پیدا ہوجاتی ہے۔

         لہٰذا فوراََ سے پیشترآپ مدنی انعامات کا رسالہ کسی بھی طرح حاصل فرمالیجئے اور مدنی انعام نمبر 15کے مطابق  ’’ کیا آپ نے یکسوئی کے ساتھ کم از کم 12منٹ فکر مدینہ(یعنی اپنے عمل کا محاسبہ کرتے ہوئے) جن جن مدنی انعامات پر عمل ہوا    رسالہ میں ان کی خانہ پُری فرمائی؟  ‘‘  اس پر عمل شروع کردیجئے،اس مدنی انعام پر عمل کے لئے آپ جب اپنا رسالہ کھولیں گے تو ہرمدنی انعام کے نیچے تیس دنوں کے حساب سے خانے دیئے ہوئے نظر آئیں گے۔آپ بلا ناغہ وقت مقررہ پر فکرِمدینہ کرتے ہوئے جن مدنی انعامات پر عمل کی سعادت ملی نیچے خانے میں

(Description: C:Userskfmsh775DesktopCapture.JPG) ورنہ        (0  ) بنا دیجئے ۔ اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ بتدریج عمل میں اضافے کے ساتھ دل میں گناہوں سے نفرت محسوس فرمائیں گے ۔

            حدیث پاک میں ہے کہ ’’  آخرت کے معاملے میں گھڑی بھر کے لئے غور و فکر کرنا ساٹھ سال کی عبادت سے بہتر ہے۔ ‘‘ ( الجامع الصغیر للسیوطی ، الحدیث ۵۸۹۷،ص ۳۶۵)

تمام اسلامی بھائی نیت فرمالیجئے کہ اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  روزانہ پابندی سے فکر مدینہ کی سعادت حاصل کریں گے۔

فکرِ مدینہ پر استقامت کا آسان طریقہ

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  اگر ہم یہ خواہش رکھتے ہیں کہ استقامت کے ساتھ روزانہ فکر مدینہ کی سعادت حاصل ہو تو اس کے لئے آپ ایک وقت مقرر فرما  لیجئے ، مثلاَآپ کی کپڑے کی دکان ہے یا آفس جاتے ہیں اور رزق میں برکت کی نیت سے وہاں قرآن پاک کی تلاوت کی سعادت کے ساتھ اور ادو وظائف پڑھتے اوراگر بتیاں وغیرہ جلاتے ہیں توان معمولات میں فکر مدینہ جیسے با برکت کام کو بھی شامل کر لیجئے اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ رزق میں برکت کے ساتھفکر مدینہ کرنے میں ایسی استقامت حاصل ہوگی کہ آپ حیران رہ جائیں گے(کسی بھی نماز کے بعد یا سوتے وقت بھی وقت مقرر کیا جا سکتا ہے)

تمام اسلامی بھائی نیت فرما لیجئے کہ اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ وقت مقررہ پر پابندی کے ساتھفکر مدینہ ضرور کریں گے ۔

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! اگر آپ یہ بھی چاہتے ہیں کہ بلا ناغہ فکر مدینہ کی سعادت بھی ملتی رہے اور عمل میں استقامت کے ساتھ گناہوں سے نجات بھی حاصل ہو جائے تو ایک بہت ہی پیارے مدنی انعام پر عمل کا معمول بنالیجئے جسے ساری دنیا مدنی قافلہ کے نام سے پکارتی ہے۔آپ ہر ماہ کم از کم 3دن کے مدنی قافلہ میں عاشقان رسول کے ہمراہ سفر کی عادت بنا کر دیکھئے  اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّآپ کی جھولی مدنی انعامات کے خوشبو دار پھولوں سے بھر کر مہکنے لگے گی۔اور  اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّا دنیا اور آخرت کی بے شمار بھلائیوں کے حصول کے ساتھ مصیبتوں اور بیماریوں سے نجات کی حیرت انگیز طور پرراہیں بھی کھُل جائیں گی۔ ترغیب کے لئے مدنی قافلے کی ایک بہار بھی سن لیجئے ۔

 



Total Pages: 194

Go To