Book Name:Naik Bannay aur Bananay kay Tariqay

اعرابی نے گھٹنوں کے بل کھڑے ہو کر عرض کیا : ’’  یارسولَ اللّٰہ!  صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  ہمیں ان کا حلیہ بیان فرمائیے تاکہ ہم انہیں پہچان سکیں ۔ ‘‘  ارشاد فرمایا :  ’’  وہ مختلف قبائل اور مختلف شہروں سے تعلق رکھنے والے اور  اللہ    عَزَّوَجَلَّ کے لئے آپس میں محبت کرنے والے ہوں گے جو ذکر اللّٰہ کی محفل میں جمع ہو کر  اللہ    عَزَّوَجَلَّ کا ذکر کریں گے۔ ‘‘ (مجمع الزوائد ،  کتاب الاذکار، باب ماجاء فی مجالس الذکر، الحدیث:۱۶۷۷۰، ج۱۰،ص۷۷)

گناہ نیکیوں میں بد   لے جائیں

            حضرت ِ سیدنا سہیل بن حَنْظَلَہ رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے کہ  اللہ     عَزَّوَجَلَّکے مَحبوب، دانائے غُیوب، مُنَزَّہٌ عَنِ الْعُیوب صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے فرمایا:  ’’ جو قوم  اللہ عَزَّوَجَلَّ    کا ذکر کرنے کے لئے کسی مجلس میں بیٹھتی ہے انکے اٹھنے سے پہلے ہی ان سے کہدیا جاتا ہے کہ کھڑے ہوجاؤ  تمہاری مغفرت کردی گئی اور تمہارے گناہ نیکیوں میں بدل دیئے گئے ہیں ۔‘ ‘(المعجم الکبیرللطبرانی،سہیل بن حنظلۃ،الحدیث:۶۰۳۹،ج۶،ص۲۱۲)

ایک غلام آزاد کرنے کا ثواب

            حضرت ِ سیدنا براء بن عازب رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے کہ سرکارِ والا تَبار، ہم بے کسوں کے مددگار ،  شفیعِ روزِ شُمار، حبیبِ پَرْوَرْدْگار صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے فرمایا:  ’’  جس نے چاندی یا دودھ صَدَقہ کیا یا کسی کو راستہ بتایا تو اسے ایک غلام آزاد کرنے کا ثواب ملے گا اور جس نے: لَآ اِلٰـہَ اِلَّا اللّٰہُ وَحْدَہٗ  لَا شَرِیْکَ لَہٗ لَہُ الْمُلْکُ وَلَہُ الْحَمْدُ وَھُوَ عَلٰی کُلِّ شَیْئٍ قَدِیْرٌ کہا اسے بھی ایک غلام آزاد کرنے کا ثواب ملے گا۔ ‘‘   (المسند للامام احمد بن حنبل، مسند الکوفیین،حدیث البراء بن عازب،الحدیث:۱۸۵۴۱، ج۶،ص۴۰۸)

درخت لگا رہا ہوں

             ’’  سُنَنِ ابن ِما      جہ  ‘‘  کی روایت میں ہے : (ایک بار) مدینے کے تا جدار صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کہیں تشریف لے جارہے تھے حضرت سیِّدُنا ابوہریرہ رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ کو مُلاحَظہ فرمایا کہ ایک پودا لگا رہے ہیں ۔ اِستِفسار فرمایا: کیا کررہے ہو؟  عرض کی: درخت لگا رہا ہوں ۔ فرمایا : میں بہترین درخت لگا نے کا طریقہ بتا دوں !  سُبْحٰنَ اللّٰہِ وَالْحَمْدُ لِلّٰہِ وَلَآ اِلٰـہَ اِلاَّ اللّٰہُ وَاللّٰہُ اَکْبَرُ پڑھنے سے ہر کَلِمَہ کے عِوَض (یعنی بدلے)  جنَّت میں ایک دَرخت لگ جاتا ہے ۔   (سنن ابن ماجہ،کتاب الادب،باب فضل التسبیح،الحدیث:۳۸۰۷،ج۴،ص۲۵۲)

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  اِس حدیثِ پاک میں چار کَلِمے ارشاد فرمائے گئے ہیں :      {1}     سُبْحٰنَ اللّٰہِ     {2}     اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ     {3}        لَآ اِلٰـہَ اِلاَّ اللّٰہُ     {4}  اَللّٰہُ اَکْبَرُ یہ چاروں کَلِمَات پڑھیں تو جنّت میں چار درخت لگائے جائیں اور کم پڑھیں تو کم۔ مَثَلاً اگر سُبْحٰنَ اللّٰہ کہا تو ایک درخت ،  ان کلمات کو پڑھنے کیلئے زَبان چلاتے جایئے اور جنت میں خوب خوب درخت لگواتے جایئے ۔

گناہ اگرچہ سمندر کی جھاگ کے برابر

                حضرت ِ سیدنا ابو ہریرہ رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے کہ تاجدارِ رسالت، مَحبوبِ رَبُّ العزت ،  محسنِ انسانیت صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے فرمایا:  ’’  جو ایک دن میں سو مرتبہ سُبْحَانَ اللّٰہِ وَبِحَمْدِہٖپڑھتا ہے اس کے گناہ مٹادئیے جاتے ہیں اگر چہ سمندرکی جھاگ کے برابر ہوں ۔  ‘‘ (سنن الترمذی،کتاب الدعوات،باب(ت:۶۱)،الحدیث:۳۴۷۷،ج۵،ص۲۸۷)

ہر حَرْف کے بد    لے دس نیکیاں

            حضرت ِ سیدنا عبد اللّٰہ بن عمررَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی عَنْہُم ا سے روایت ہے کہ شہنشاہِ خوش خِصال، رسولِ بے مثال ،  بی بی آمنہ کے لال صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے ارشاد فرمایا:  ’’  جس نے سُبْحٰنَ اللّٰہِ وَالْحَمْدُ لِلّٰہِ وَلَآ اِلٰـہَ اِلَّا اللّٰہُ وَاللّٰہُ اَکْبَرُ کہا اس کے لئے ہر حرف کے بدلے دس نیکیاں لکھی جائیں گی ۔ ‘‘ (المعجم الاوسط للطبرانی،من اسمہ محمد،الحدیث:۶۴۹۱،ج۵،ص۳۲)

سرکار صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی شفاعت پانے والا

            حضرت ِ سیدنا ابوہریرہ رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں کہ میں نے عرض کی: یارسولَ اللّٰہ!  صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  قیامت کے دن آپ کی شفاعت سے بہرہ مند ہونے والا خوش نصیب کون ہوگا؟  فرمایا:  ’’  اے ابو ہریرہ!  میرا گمان یہی تھا کہ تم سے پہلے مجھ سے یہ بات کوئی نہ پوچھے گا کیونکہ میں حدیث سننے کے معاملہ میں تمہاری حرص کو جانتا ہوں ،  قیامت کے دن میری شفاعت پانے والا خوش نصیب وہ ہوگا جو صدقِ دل سے لَآ اِلٰـہَ اِلَّا اللّٰہُ کہے گا ۔  ‘‘ (صحیح البخاری،کتاب العلم،باب الحرص علی الحدیث،الحدیث:۹۹،ج۱،ص۵۳)

سب سے افضل ذکر

         



Total Pages: 194

Go To