Book Name:Naik Bannay aur Bananay kay Tariqay

سے (اشارہ کر کے) فرمایا: ’’ ان دوشخصوں کومیرے پاس لاؤ !  ‘‘  میں ان دونوں کولے آیا،حضرت سیِّدُنا عمر   رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ نے اُن سے اِسْتِفسار  فرمایا:  ’’ تم کہاں سے تَعَلُّق رکھتے ہو؟  عرض کی ’’ طائف سے ‘‘  فرمایا :  ’’ اگرتم مدینۂ منوَّرہ کے رہنے والے ہوتے (کیونکہ وہ مسجِدکے آداب بخوبی جانتے ہیں ) تو میں تمہیں ضَرور سزا دیتا (کیونکہ) تم  رسولُ اللّٰہ    صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی مسجِد میں اپنی آوازیں بُلند کرتے ہو! (صحیح بخاری،ج۱،ص۱۷۸،حدیث۴۷۰)

            حضرتِ  سیِّدُناعلامہ علی قاری علیہ رَحمۃُ اللّٰہ الباری    مُحَقِّق عَلَی الْاِطْلاق شیخ ابن ہُمام علیہ رحمۃُاللّٰہ السَّلامکے حوالے سے نَقْل فرماتے ہیں :

اَلْکَلَامُ   الْمُبَاحُ فِی الْمَسْجِدِ مَکروہٌ  یَاکُلُ   الْحَسَنَاتِ۔       (مرقاۃالمفاتیح،ج۲،ص۴۴۹)

            ترجَمہ: ’’  مسجِدمیں مُباح(یعنی جائز) بات کرنا مکروہِ(تحریمی)ہے اور نیکیو ں کو کھاجاتا ہے۔ ‘‘   

            حضرت سَیِّدُنا اَنَس بن مالِک   رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ سے مَروی ہے کہ سرکارِ والا تبار، بِاِذْنِپروَردگار دو  ۲جہاں کے مالِک ومختار صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَنے ارشاد فرمایا :

                                                                                                اَلضِّحْکُ فِی الْمَسْجِد ظُلْمَۃٌ فِی الْقَبْر۔(الجامِعُ الصَّغیرص۳۲۲حدیث:۵۲۳۱)

ترجَمہ: ’’  مسجِد میں ہنسنا قبر میں اندھیرا (لاتا) ہے۔ ‘‘

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  مذکورہ بالا رِوایات کوباربارپڑھئے اور  اللہ عزَّوَجَلَّ کے خوف سے لرزئیے! کہیں ایسانہ ہوکہ مسجِدمیں داخِل تو ہوئے ثواب کمانے مگر خوب ہَنس بَول کرنیکیاں بربادکرکے باہَرنکلے کہ مسجِد میں دُنیا کی جائز  بات بھی نیکیوں کوکھاجاتی ہے۔لہٰذامسجِدمیں پُرسُکون اورخاموش رہئے۔ بیان بھی کریں یاسنیں توسنجیدَگی کے ساتھ کہ کوئی ایسی بات نہ ہو جس سے لوگوں کوہنسی آئے۔نہ خودہنسئے نہ لوگوں کوہنسنے دیجئے کہ مسجِدمیں ہنسناقَبْرمیں اندھیرا    لاتا ہے۔ ہاں ضَرورتاًمسکرانامنع نہیں ۔مسجِد کے اِحتِرام کا ذِہن بنانے کیلئے دعوتِ اسلامی کے مدنی قافِلوں میں سفر کا معمول بنائیے ۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                    صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

"بسمِ اللّٰہِ الرَّحمٰنِ الرَّحِیم" کے اُنّیس حُرُوف کی نِسبت سے مسجِد کے مُتَعَلّق19 مدنی پھول

             مروی ہے کہ ایک مسجِد  اپنے ربّ عَزَّوَجَلَّ  کے حُضُور شکایت کرنے چلی کہ لوگ مجھ میں دنیا کی باتیں کرتے ہیں ۔ ملائکہ اسے آتے ہوئے ملے اور بولے، ہم ان ( مسجِد میں دنیا کی باتیں کرنے والوں )کے ہَلاک کرنے کو بھیجے گئے ہیں ۔  (الحدیقۃ الندیۃ، نوع۴۰،کلام الدنیا فی المساجد بلا عذر،ج۲،ص۳۱۸)

            روایت کیا گیا ہے کہ جو لوگ غیبت کرتے ( جو کہ سخت حرام اور زِنا سے بھی اَشَدّ ہے) اور جو لوگ مسجِد میں دنیا کی باتیں کرتے ہیں ان کے منہ سے گندی بدبو نکلتی ہے جس سے فِرِشتے     اللہ عزَّوَجَلَّ کے حُضُور ان کی شکایت کرتے ہیں ۔ ‘‘  سبحٰنَ اللّٰہ(عَزَّ وَجَلَّ)! جب مُباح و جائز بات بِلا ضَرورت ِ شَرعیّہ کرنے کو مسجِد


 

 



Total Pages: 194

Go To