Book Name:Naik Bannay aur Bananay kay Tariqay

وَ مِنْ رَّحْمَتِهٖ جَعَلَ لَكُمُ الَّیْلَ وَ النَّهَارَ لِتَسْكُنُوْا فِیْهِ وَ لِتَبْتَغُوْا مِنْ فَضْلِهٖ وَ لَعَلَّكُمْ تَشْكُرُوْنَ(۷۳) (پ۲۰،القصص:۷۳)

ترجمۂ کنزالایمان:اور اس نے اپنی مِہر سے تمہارے لئے رات اور دن بنائے کہ  رات میں آرام کرو اور دن میں اس کا فضل ڈھونڈو اور اس لئے کہ تم حق مانو ۔

            مُفَسّرِ شہیر حکیم الامّت حضرت مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْحَنَّان  ’’  نور العرفان ‘‘   میں اِس آیت کے تحت تحریرفرماتے ہیں : اس سے یہ بھی معلوم ہوا کہ کمائی کے لیے دن اور آرام کیلئے رات مقرر کرنی بہتر ہے ،  رات کو بلاو    جہ نہ جاگے، دن میں بیکار نہ رہے اگر معذوری ( مجبوری ) کیو   جہ سے دن میں سوئے اور رات کو کمائے تو حرج نہیں جیسے رات کی نوکریوں والے ملازم وغیرہ ۔

صُبح کی فضیلت

            نظامُ الاوقات متعیّن کرتے ہوئے کام کی نوعیت اور کیفیت کو پیش نظر رکھنا مناسب ہے مَثَلاً جو اسلامی بھائی رات کو جلدی سوجاتے ہیں صبح کے وقت وہ تروتازہ ہوتے ہیں لہٰذا علمی مشاغل کیلئے صبح کا وقت بہُت مناسب ہے سرکارِ نامدار، مدینے کے تاجدار صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی یہ دعا  ’’ امام ترمذی  ‘‘  نے نقل کی ہے :  ’’  اے اللّٰہ عزَّوَجَلَّ !  میری اُمّت کیلئے صبح کے اوقات میں بَرَکت عطا فرما ۔ ‘‘ (سنن الترمذی،کتاب البیوع،باب ماجاء فی التبکیر بالتجارۃ،الحدیث:۱۲۱۶،ج۳،ص۶)

             چنانچہ مُفَسّرِشہیر حکیم الامّت حضر ت مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْحَنَّاناس حدیثِ پاک کے تحت فرماتے ہیں : یعنی (یااللّٰہ! ) میری اُمّت کے تمام ان دینی و دنیاوی کاموں میں بَرَکت دے جو وہ صبح سویرے کیا کریں جیسے سفر ،  طلبِ علم ،  تجارت وغیرہ۔   (مراٰۃ المناجیح،سفر کے طریقے،ج۵،ص۴۹۱)

            کوشش کیجئے کہ صبح اٹھنے کے بعد سے لیکر رات سونے تک سارے کاموں کے اوقات مقرَّر ہوں مَثَلاً اتنے بجے تہجد، علمی مشاغل، مسجد میں تکبیرِ اُولیٰ کیساتھ باجماعت نماز فجر ( اسی طرح دیگر نمازیں بھی ) اشراق ،  چاشت ،  ناشتہ ،  کسبِ معاش ،  دوپہر کا کھانا، گھریلو معاملات ،  شام کے مشاغِل ،  اچھی صحبت، ( اگر یہ مُیَسَّر نہ ہو تو تنہائی بدر جہا بہتر ہے) اسلامی بھائیوں سے دینی ضروریات کے تحت ملاقات وغیرہ کے اوقات متعین کر لئے جائیں ،  جو اس کے عادی نہیں ہیں ان کیلئے ہو سکتا ہے شروع میں کچھ دشواری پیش آئے پھر جب عادت پڑجائے گی تو اس کی برکتیں بھی خود ہی ظاہر ہوجائیں گی۔

         بہرحال خوب غور و تفکُّر کیجئے کہ ہمارا مقصد ِحیات کیا ہے ؟  اب تک ہم نے اپنی زندگی کس طرح گُزاری ؟  آہ!  نَزع و قبر و حشر اور میزان و پُل صِراط پر ہمارا کیا بنے گا؟  ہمارے وہ عزیز و اَقارِب جو ہم سے پہلے دُنیا سے رُخصت ہو گئے قبر میں نہ جانے اُن کے ساتھ کیا ہو رہا ہو گا؟   اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ اِس طرح غور و فکر کرنے سے لذائذ ِدُنیا سے چُھٹکارا ،  زندگی کے قیمتی لمحات کو فضولیات میں برباد کرنے سے نجات اور موت کی یاد کی برکت سے نیکیوں کی رَغبت کے ساتھ ساتھ اجرِ کثیر بھی حاصل ہو گا۔

60 سال کی عبادت سے بہتر

            چنانچہ سرکارِ مدینہ ،  را     حتِ قلب و سینہ ،  باعثِ نُزُولِ سکینہ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا فرمانِ باقرینہ ہے : (آخرت کے معاملے میں )  ’’ گھڑی بھر کے لیے غور و فکر کرنا 60 سال کی عبادت سے بہتر ہے ۔ ‘‘ (الجامع الصغیرللسیوطی،حرف الفائ،الحدیث:۵۸۹۷،ص۳۶۵)

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  مقصد ِحیات کو سمجھنے، اپنی زندگی کو اسلامی تعلیمات کے مطابق گزارنے اور دنیا و آخِرت بہتر بنانے کیلئے  شیخِ طریقت، امیر ِاہلسنّت،  دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ  کے عطا کردہ مدنی انعامات کو اپنا لیجئے ۔

          آپ دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے مسلمانوں کی دنیا و آخرت بہتر بنانے کے لیے سوال نامے کی صورت میں اسلامی بھائیوں کیلئے 72 ،  اسلامی بہنوں کیلئے63، دینی طلبہ کے لیے 92اور دینی طالبات کیلئے 83، جبکہ مدنی مُنّوں اور مُنّیوں کیلئے 40 مدنی انعامات پیش کیے ہیں ۔ مدنی انعامات کا رسالہ مَکْتَبَۃُ الْمَدِیْنَہ سے مل سکتا ہے، روزانہ فکرِ مدینہ کے ذریعے اُسکو پُر کرکے مدنی ماہ کی 10 تاریخ کے اندر اندر اپنے یہاں کے دعوتِ اسلامی کے ذمہ دار کو جمع کروانے کامعمول بنالیجئے۔

          اپنے گناہوں کا احتساب کرنے، قبر و حشر کے بارے میں غور و فکر کرنے اور اپنے اچھے بُرے کاموں کا جائزہ لیتے ہوئے مدنی انعامات کا رسالہ پُر کرنے کو دعوتِ اسلامی کے مدنی ماحول میں فکرِ مدینہ کرنا کہتے ہیں ۔ آپ بھی رسالہ حاصل کرلیجئے، اگر فی الحال پُر نہیں کرنا چاہتے تو نہ سہی، اتنا تو کیجئے کہ ولی کامل ،  عاشقِ رسول ،  اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْمَنَّانکی پچیسویں شریف کی نسبت سے روزانہ کم از کم 25 سیکنڈز کیلئے اُس کو دیکھ لیجئے   اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  دیکھنے سے اور پڑھتے رہنے سے فکر ِمدینہ کرنے اور اِس رسالہ کو بھرنے کا ذہن بنے گا اور اگر بھرنے کا معمول بن گیا تو  اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ   اُسکی برکتیں آپ خود ہی دیکھ لیں گے۔

مدنی انعامات پر کرتا ہے جو کوئی عمل                          مغفرت کر بے حساب اسکی خدائے