Book Name:Al Wazifa tul karima

توشام تک اور شام پڑھے تو صبح تک۔([1])

{4} بِسْمِ اللہِ مَا شَآءَ اللَّهُ لَا يَسُوقُ الْخَيْرَ اِلَّا اللَّهُ مَا شَآءَ اللَّهُ لَا يَصْرِفُ السُّوْۤءَ اِلَّا اللَّهُ مَا شَآءَ اللَّهُ مَا کَانَ مِنْ نِّعْمَةٍ فَمِنْ اللَّهِ مَا شَآءَاللہُ لَا حَوْلَ وَلَا قُوَّۃَ اِلَّا بِا اللہِ([2])تین تین بار

            اس کا فائدہ سات چیزوں سے پناہ :  {1جلنا  {2ڈوبنا  {3چوری {4سانپ  {5بچھو  {6شیطان  {7سلطان۔([3])

            صبح سے شام تک اور شام سے صبح تک۔

{5} اَعُوْذُ بِكَلِمَاتِ اللَّهِ التَّآمَّةِ مِنْ شَرِّ مَا خَلَقَ ([4])تین تین بار

             سانپ، بچھو وغیرہ موذیات سے پناہ ہو۔([5])

{6} بِسْمِ اللَّهِ الَّذِي لَا يَضُرُّ مَعَ اسْمِهِ شَيْءٌ فِي الْاَرْضِ وَلَا فِي السَّمَآءِ وَهُوَ السَّمِيعُ الْعَلِيْم([6])تین تین بار

            زہر و ضرر سے امان رہے ۔

{7}رَضِيْتُ بِاللهِ رَبًّا وَّبِالاِْسْلَامِ دِيْنًا وَّبِسَیِّدِنَا وَمَولَانَا مُحَمَّدٍ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّم نَبِيًّا وَّ رَسُوْلًا ([7]) تین تین بار

            اللہ عَزَّ وَجَلَّ کے کرم پرحق ہے کہ روزِ قیامت اسے راضی کرے ۔([8])

{8} حَسْبِیَ اللّٰهُ ﱙ لَاۤ اِلٰهَ اِلَّا هُوَؕ-عَلَیْهِ تَوَكَّلْتُ وَ هُوَ رَبُّ الْعَرْشِ الْعَظِیْمِ۠(۱۲۹)([9])

دس دس بار

            ہر بلا ومکر سے محفوظی، حدیث میں سات بار فرمایا۔([10])حضور سیدنا غوثِ اعظم رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہسے دس بار آیا، فقیر کااسی پر عمل ہے ، اسے بحمد اللہ  تعالیٰ تمام مقاصد کے لئے کافی پایا۔

{9}فَسُبْحٰنَ اللّٰهِ حِیْنَ تُمْسُوْنَ وَ حِیْنَ تُصْبِحُوْنَ(۱۷) وَ لَهُ الْحَمْدُ فِی السَّمٰوٰتِ وَ الْاَرْضِ وَ عَشِیًّا وَّ حِیْنَ تُظْهِرُوْنَ(۱۸) یُخْرِ جُ الْحَیَّ مِنَ الْمَیِّتِ وَ یُخْرِ جُ الْمَیِّتَ مِنَ الْحَیِّ وَ یُحْیِ الْاَرْضَ بَعْدَ مَوْتِهَاؕ-وَ كَذٰلِكَ تُخْرَجُوْنَ۠(۱۹) ([11])  ایک ایک بار

جس سے کسی دن سب وظائف رہ جائیں تو یہ تنہا ان سب کی جگہ کافی ہے نیز رات دن کے ہر نقصان کی تلافی ہے ۔

{10} اَفَحَسِبْتُمْ اَنَّمَا خَلَقْنٰكُمْ عَبَثًا وَّ اَنَّكُمْ اِلَیْنَا لَا تُرْجَعُوْنَ(۱۱۵) فَتَعٰلَى اللّٰهُ الْمَلِكُ الْحَقُّۚ-لَاۤ اِلٰهَ اِلَّا هُوَۚ-رَبُّ الْعَرْشِ الْكَرِیْمِ(۱۱۶) وَ مَنْ یَّدْعُ مَعَ اللّٰهِ اِلٰهًا اٰخَرَۙ-لَا بُرْهَانَ لَهٗ بِهٖۙ-فَاِنَّمَا حِسَابُهٗ عِنْدَ رَبِّهٖؕ-اِنَّهٗ لَا یُفْلِحُ الْكٰفِرُوْنَ(۱۱۷) وَ قُلْ رَّبِّ اغْفِرْ وَ ارْحَمْ وَ اَنْتَ خَیْرُ الرّٰحِمِیْنَ۠(۱۱۸)

ختم سورۃ تک([12]) ایک ایک بار

 



[1]     ترجمہ  : اللہ عَزَّ وَجَلَّ  کے نام سے ، جس کے نام سے کوئی چیز نقصان نہیں پہنچاتی نہ زمین میں اور نہ آسمان میں اور وہی ہے سننے اور جاننے والا۔(سنن ابی داود، کتاب الادب، باب مایقول اذا اصبح، الحدیث : ۵۰۸۸، ج۴، ص۴۱۸)

[2]     ترجمہ  : میں اللہ عَزَّ وَجَلَّ  کے رب ، اسلام کے دین اور محمد صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے نبی اور رسول ہونے پر راضی ہوں ۔

[3]     المصنف لابن ابی شیبۃ ، کتاب الدعاء ، باب ما یستحب ان یدعوا بہ اذا اصبح ، الحدیث : ۸، ج۷، ص۴۱

[4]     ترجمہ ٔ کنزالایمان :  مجھے اللہ کافی ہے اس کے سوا کسی کی بندگی نہیں ، میں نے اسی پر بھروسہ کیا اور وہ بڑے عرش