Book Name:Sayyidi Qutb e Madina

        حُضور سیِّدی قطبِ مدینہ  رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہپر وصال سے  دو ماہ قبل کچھ عجیب سی کیفیت طاری تھی ۔  کچھ ارشاد فرماتے  تو سمجھ میں نہ آتا، بعض اوقات بار بار فرماتے  :  آئیے  قبلۂ مَن! تشریف لائیے ! ایک بار حاضِرین نے  دیکھا کہ آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہہاتھ جوڑ کر کسی سے  التجا کر رہے  ہیں :  مجھے  مُعاف فرما دیجئے ، کمزوری کے  باعث میں تعظیم کے  لئے  اُٹھ نہیں پا رہا ۔  کچھ دیر کے  بعد حاضِرین کے  اِستِفسار(یعنی پوچھنے ) پر ارشاد فرمایا :

 ابھی ابھی حضرتِ سیِّدُنا خضر عَلٰی نَبِیِّناوَعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلام، حضور سرکارِ بغداد سیِّدُنا غوثِ اعظم رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہاور میرے  پیر و مرشِداعلیٰ حضر ت امام احمد رضا خان رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہتشریف لائے  تھے  ۔  

وصال شریف و جنازۂ مبارَکہ

        ۴ ذُوالحجِّۃِ الْحرام۱۴۰۱ھ (81-10-2) بروز جُمُعہمسجدُالنَّبَوِیِّ الشَّریف علٰی صاحِبِہا الصَّلٰوۃ وَالسَّلامکیمُؤَذِّن نے ’’ اَللّٰہُ اکبر اَللّٰہُ اکبر ‘‘کہا اور سیِّدی قُطبِ مدینہ  رحمۃُ اللّٰہ تعالٰی علیہنے  کلمہ شریف پڑھا اور آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہکی روح قَفَسِ عُنصُری سے  پرواز کرگئی ۔  اِنَّا لِلّٰهِ وَ اِنَّاۤ اِلَیْهِ رٰجِعُوْنَؕ(۱۵۶)  بعدِ غسل شریف کفن بچھا کر سرِ اَقدس کے  نیچے  سرکارِ مدینہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکے  حُجرۂ مَقصُورہ شریف کی خاک مبارَک رکھی گئی، آمِنہ رضی اﷲ تعالٰی عنہاکے  دلبر صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکی قبرِ انور کا غُسّالہ(غُسْ ۔ سالہ) شریف اور مختلف تبرکات (تَ ۔ بَر ۔ رُکات)ڈالے  گئے  ۔  پھر کفن شریف باندھا گیا ۔  بعد نمازِعَصر دُرُود و سلام اور قصیدۂ بُردہ شریف کی گونج میں جنازۂ مبارَکہ اٹھایا گیا ۔  

عاشق کا جنازہ ہے  ذرا دھوم سے  نکلے

محبوب  کی گلیوں میں ذرا گھوم کے  نکلے

        بِالآخر بے  شمار سوگواروں کی موجودگی میں سیِّدی قُطبِ مدینہ  رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہکو ان کی آرزو کے  مطابِق جنَّتُ الْبقیع کے  اُس حصّے  میں جہاں اہلبیتِ اطہارعَلَیْہِمُ الرِّضوانآرام فرما ہیں، وہاں سیِّدَۃُ النِّسا فاطمۃُ الزَّہرارضی اﷲ تعالٰی عنہا کے  مزار پُرانوار سے  صرف دو گز کے  فاصلے  پرسِپردِ خاک کیا گیا ۔  اللہ عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے  صَدقے  ہماری مغفِرت ہو ۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

’’چل مدینہ‘‘ کے  سات حُرُوف کی نسبت سے  قطبِ مدینہ  کے 7 ملفوظات

٭ جو شریعت کا پابند نہیں وہ طریقت کے  لائق نہیں٭ خواہِش پرستی مُہلِک رفیق ہے  اور بُری عادت زبردست دشمن ہے  ٭ جو شخص اپنے  کام کو پسند کرتا ہے  اس کی عقل میںفُتُور آجاتا ہی٭ دولت کی مستی سے  خداعَزَّوَجَلَّ کی پناہ مانگو، اس سے  بہت دیر میں ہوش آتا ہی٭ دنیا بَہُت بُری چیز ہے  جو اس میں پھنسا وہ پھنستا ہی چلا جاتا ہے  اور جو اِس سے  دُور بھاگتا ہے  اُس کے  قدموں میں ہوتی ہے  ٭ کسی نیک عمل کی توفیق ہونا ہی قبولیت کی نشانی ہی٭ مدینۂ منوَّرہ زادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماً  میں اگر کسی کا خط پڑھا جاتا ہے  یا اس کا ذِکر کیا جاتا ہے  یا اس کا نام لیا جاتا ہے  تو یہ اس کی خوش نصیبی ہے  ۔  

  عا شقِ مصطَفٰے  ضیا ء الد ین

عاشقِ مصطَفٰے  ضِیاءالدین                              زاہِد و پارسا ضیاء الدین

دلبر و دلربا ضِیاء الدین                                 میرے  دل کی ضِیا، ضیاء الدین

تم کو قطبِ مدینہ یامرشد!                             عُلَما نے  کہا ضیاء الدین

یہ شَرَف کم نہیں شَرَف کہ میں                     ہوں مرید آپکا ضیاء الدین

مجھ کو اپنا بناؤ دیوانہ                                     بہرِ غوثُ الورٰی ضیاء الدین

چشمِ رحمت بَسُوئے  مَن([1]) مُرشِد                  بہرِ احمد رضا ضیاء الدین

ایسا کردے  کرم رہیں یارب!                        مجھ سے  راضی سدا ضیاء الدین

کیسے  بھٹکوں گا کہ ہیں میرے  تو                       رہبر و رہنما ضیاء الدین

ایک مدت سے  آنکھ پیاسی ہے                       اپنا جلوہ دکھا ضیاء الدین

مرضِ عصیاں سے  نیم جاں ہوں میں              مجھ کو دیدو شِفا ضیاء الدین

چشمِ تر اور قلبِ مُضطَر دو                              بہرِ حَمزہ شہا ضیاء الدین

میری سب مشکلیں ہوں حل مُرشِد                میرے  مشکل کُشا ضیاء الدین

پون سو سال تک مدینے  میں                          تم نے  بانٹی ضِیا، ضیاء الدین

جامِ عشقِ نبی پِلا ایسا                                      ہوش میں آؤں نا ضیاء الدین

میرے  دشمن ہیں خون کے  پیاسے                                 مجھ کو ان سے  بچا ضیاء الدین

 



 [1]    اُن دنوں اور  تادمِ تحریک عرب شریف میں گورنمنٹ کی طرف سے ’’محفل میلاد ‘‘  محفل میلادپر پابندی ہے  ۔



Total Pages: 6

Go To