Book Name:Sayyidi Qutb e Madina

                                کروں بند آنکھیں تو جلوہ نُما ہیں(وسائلِ بخشش ص ۳۰۶)

        اَلْحَمْدُ لِلّٰہعَزَّوَجَلَّکم و بیش دو ماہ مدینۂ منوَّرہزادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماً میں حاضِری کی سعادت حاصِل رہی اِس دوران تقریبًا روزانہ آستانۂ عالِیہ پر ہونے  والی محفلِ نعت میں حاضِری دیتا رہا ۔  بارہا شام کو بھی آستانۂ مُرشِدی  رحمۃُ اللّٰہ تعالٰی علیہپر حاضِری نصیب ہوتی رہی ۔  جب مدینۂ طیِّبہزادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماً سے  رخصت کی جاں سوز گھڑی آئی تو سر پر کوہِ غم ٹوٹ پڑا، بارگاہِ رسالت میں سلامِ رخصت عرض کرنے  کے  لئے  چلا تو عجیب حالت تھی، محبوب صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکی گلی کے  درودیوار اوربَرگ و بار چومتا ہوا بڑھا چلا جارہا تھا ۔  اِسی دوران محبوب صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکی گلی کے  ایک خار(یعنی کانٹے ) نے  آنکھ کے  پپوٹے  پر پیار سے  چٹکی بھرلی جس سے  ہلکا سا خون اُبھر آیا ۔  

یہ زخم ہے  طیبہ کا یہ سب کو نہیں ملتا

کوشش نہ کرے  کوئی اِس زخم کو سینے  کی

        بَہَرحال مواجَھَہ شریف پر حاضِر ہوکر سلام عرض کرکے  روتا ہوا مسجدُالنَّبَوِیِّ الشَّریف علٰی صاحِبِہَا الصَّلٰوۃُ وَالسَّلامسے  باہَر نکلا اور گرتاپڑتا مُرشِد کے  آستانۂ عالیہ پر حاضِر ہوا اور مضطرِبانہ سر مُرشِد کے  زانوپر رکھ دیا اور روتے  روتے  ہچکیاں بندھ گئیں ۔  مُرشِدی رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہنے  انتہائی مَحَبَّت کے  ساتھ سر پر دستِ شفقت پھیر کر بٹھایا اور ارشاد فرمایا :  ’’بیٹا تم مدینۂ منوَّرہزادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماًسے  جا نہیں ، آرہے  ہو ۔ ‘‘ اُس وَقت مجھے  اپنے  ولیٔ کامل پیر و مُرشِد رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہکے  اِس جملے  کے  معنٰی سمجھ میں نہیں آئے  کیونکہ بظاہِر میں جا رہا تھا اورمُرشِد فرما رہے  تھے  : ’’ تم جانہیں، آرہے  ہو ۔ ‘‘ لیکن اب اچّھی طرح اِس جملے  کے  سربَستہ راز کو سمجھ چکا ہوں کیوں کہ یہ مُرشِد کی کرامت تھی اورمیرا حسنِ ظن ہے  کہ مُرشِد میرا مستقبل دیکھ چکے  تھے  اوراَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّوَجَلَّ  سرکارِ مدینہصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکے  طفیل مُرشِد کے  صدقیمدینۂ پاکزادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماًکی اتنی بار حاضِری نصیب ہوئی ہے  کہ مجھے  یادبھی نہیں کہ میں نے  کتنی بار سفرِ مدینہ کیا ہے ! یہ سب کرم کی بات ہے  ۔  اللہ عَزَّوَجَلَّ  کرے  مُرشِد کے  صدقے  اسی طرح مدینۂ منوَّرہزادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماً میں آنا جانا رہے  اور آخر کار جنَّتُ الْبقیع میں مُرشِد کے  قدموں میں مدفن نصیب ہوجائے  ۔  

رہے  ہر سال میرا آنا جانا یارسولَ اللّٰہ

                  بقیعِ  پاک  ہو  آخِر  ٹھکانا  یارسو لَ اللّٰہ(وسائلِ بخشِش ص۱۰۰)

امامِ اہلسنّت   نے  دستار بندی فرمائی

        سیِّدی قطبِ مدینہ  رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہکی ولادتِ باسعادت ۱۲۹۴ھ، 1877ء میں پاکستان کے  ضِلع ضِیا کوٹ (دعوتِ اسلامی کے  مَدَنی ماحول میں ’’سیالکوٹ‘‘ کو ’’ضیاء الدین‘‘ کی نسبت سے  ’’ ضِیا کوٹ‘‘ کہتے  ہیں )میں بمقام’’ کلاس والا ‘‘ہوئی ۔  آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہحضرت ِسیِّدُنا صدِّیق اکبر رضی اﷲ تعالٰی عنہ  کی اولاد میں سے  ہیں ۔  ابتِدائی تعلیم ضِیا کوٹ (سیالکوٹ ) میں حاصِل کی ۔  پھر مرکز الاولیالاہور شریف اور22 خواجہ کی چوکھٹ دِہلی شریف میں کچھ عرصہ تحصیلِ علم کیا، بِالآخِر پیلی بھیت، (یوپی  ۔ الھند) میں حضرت ِعلامہ مولیٰنا وصی احمد محدِّثِ سُورتی عَلَیْہِ رَحمَۃُاللّٰہِ القویکی خدمت میں تقریباً چار4 سال رَہ کرعُلومِ دینیہ حاصِل کئے  اور دورۂ حدیث کے  بعد سندِ فراغت حاصِل کی ۔  اَلحمدُ لِلّٰہ! امامِ اہلسنّت رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہکے  دستِ کرامت سے  سیِّدی قطبِ مدینہ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہکی دستار بندی ہوئی ۔  آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہنے  امامِ اہلسنّت رحمۃُ اللّٰہ تعالٰی علیہسے  بَیعَت بھی کی اور صرف 18 سال کی عمر میں اعلیٰ حضرت رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہسے  سندِ خِلافت بھی پائی ۔  

کلی ہیں گلستانِ غوثُ  الْوَریٰ کی

                یہ باغِ رضا  کے  گُلِ خوشنما ہیں(وسائلِ بخشِش ص۳۰۶)

بابُ المدینہ تا بغداد

          سیِّدی قطبِ مدینہ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہتقریباً 24سال کی عمر میں   اپنے  پیر ومُرشِد امامِ اہلسنّترَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہسے  رخصت ہو کر۱۳۱۸ھ، ( 1900ء) میں بابُ المدینہ کراچی تشریف لائے  ۔  کچھ عرصہ یہیںگزار کرحُضورِ غوثِ اعظمعَلَیْہ رَحمَۃُ اللّٰہ الاکرم سے  خُصُوصی فیوض و برکات حاصل کرنے  کے  لئے  بغدادِمُعَلّٰیحاضِر ہوئے  ۔  وہاں تقریباً چار 4 برس اِستِغراق کی کیفیّت رہی اور مجذوب رہے  ۔ عَروس البلاد بغداد میں 9 برس اور کچھ ماہ قِیام رہا ۔  

مدینۂ پاک میں حاضری

        ۱۳۲۷ھ، 1910ء میں سیِّدی قطبِ مدینہرَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہبغدادِ پاک سے  براستہ دِمَشق (شام) بذرِیعۂ ریل گاڑی مدینۂ طیِّبہزادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماً حاضِر ہوئے  ۔  اُن دنوں وہاں تُرکوں کی ’’خدمت‘‘ تھی ۔  

گنبد خضرا پہ آقا جاں مِری قربان ہو

                میری دیرینہ یِہی حسرت شہِ اَبرار  ہے (وسائلِ بخشش ص ۱۲۲)

سات  دن کا فاقہ

        حضرتِ سیِّدی قطبِ مدینہ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہفرماتے  ہیں :  جب میں مدینۂ منوَّرہزادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماًحاضِر ہوا تو شُروع کے  دنوں میں ایسا وقت بھی آیا کہ مجھ پر سات 7 دن کا فاقہ گزرا ۔  ساتویں روز جب میں بھوک سے  نِڈھال ہوگیا تو میرے  پاس ایک پُرہیبت بُزُرگ تشریف لائے  اور انہوں نے  مجھے  تین 3 مشکیزے  دیئے  ۔  ایک میں شہد، دوسرے  میں آٹا اور



Total Pages: 6

Go To