Book Name:Aarzoo e Deedar e Madina

گھڑی جبکہ رَمَضاں کی رُخصت کی آئی

تڑپتے تھے صدمے سے اسلامی بھائی

بِلکتا تھا کوئی ، کوئی غمزدہ تھا

مزا خوب رَمَضان میں آرہا تھا

 

دمِ رخصتِ ماہِ رَمَضاں مسلماں

تھے غمگین و حَیراں ، پریشاں پریشاں

شبِ عید دیکھو جسے رو رہا تھا

مزا خوب رَمَضان میں آرہا تھا

 

مجھے ماہِ رَمَضاں کا غم دے الٰہی

مِٹا حُبِّ دنیا کی دل سے سیاہی

مزا فانی سَنسار میں کیا رکھا تھا

مزا خوب رَمَضان میں آرہا تھا

 

جو  تھے   مُعتَکِف    ’’ مَدَنی مرکز ‘‘  کے  اندر

بِچارے تھے عطّارؔ حد دَرَجے مُضطَر

دمِ الوَداع ان کا دل جل رہا تھا

مزا خوب رَمَضان میں آرہا تھا

اللّٰہ عطا ہو مجھے دیدارِ مدینہ

(۲۱ شوال المکرم ۱۳۴۱ھ کو یہ کلام قلمبند کیا گیا)

اللّٰہ    عطا   ہو    مجھے    دیدارِ  مدینہ

ہوجاؤں میں پھر حاضرِدربارِ مدینہ

 

آنکھیں مِری محروم ہیں مدّت سے الہٰی

عرصہ ہوا دیکھا نہیں گلزارِ مدینہ

 

پھر دیکھ لوں صَحرائے مدینہ کی بہاریں

پھر پیشِ نظر کاش! ہوں کُہسارِ مدینہ

 

پھر گنبدِ خَضرا کے نظارے ہوں مُیَسَّر

اللّٰہ     دِکھا  دے   مجھے   مینارِ  مدینہ

 



Total Pages: 10

Go To