Book Name:Khazanay Kay Ambaar

                        کرَم بہرِ شہِ کرب و بَلا ہو                    شریک اِس میں ہر اِک چھوٹا بڑا ہو  (وسائل بخشش ص۹۱) 

                                                                                                                                                                                                                                                                                                اٰمین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

 دَھن کمانے کی دُھن

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! آج ہمارے مُعاشَرے میں اَکثر لوگوں کے ذِہنوں پردولتوں اور خزانوں کے اَنبار جمْع کرنے کی دُھن سُوار ہے اور اِس راہِ پُرخار میں خواہ کتنی ہی تکالیف سے دوچار ہونا پڑے،   پرواہ نہیں ،  بس!  ہر وقْت دولتِ دُنیا جمع کرنے کی حِرص ہے،  اگر کبھی آخِرت کی بھلائی کے لئے نیکیوں کی دولت اکٹھّی کرنے کی طرف  تَوَجُّہدلائی بھی جائے تو مُلازَمَت یا کاروباری مصروفِیَّت وغیرہ کے بہانے آڑے آجاتے ہیں ،  بال بچوں کا دُنیوی مستقبِل سنوارنے کی کوشِشوں میں اپنا اُخرَوی مستقبِل بھول جاتے ہیں ،  اَولاد کی دُنیوی پڑھائی پھر اُن کی شادی کی فِکْر کسی اور طرف ذِہن جانے ہی نہیں دیتی۔  اَولاد کے دُنیَوِی مستقبِل کی بہتری کے لئے ہمارے بزرگانِ دین رَحِمَہُمُ اللہُ المُبِین کا کیسا مَدَنی ذِہن تھا!  یہ بھی مُلاحَظہ فرمائیے چُنانچِہ

عُمَر بن عبدُ العزیزکی مَدَنی سوچ

   دعوتِ اسلامی کے اِشاعَتی اِدارے مکتبۃُ المدینہ کی مطبوعہ415 صَفْحات پر مشتمل کتاب  ’’ ضِیائے صَدَقات‘‘   صفْحہ83 پرہے کہ حضرتِ سیِّدُنا مَسْلَمَہ بن عَبدُ الْمَلِک عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہِ الْمَلِکحضرتِ سیِّدُنا عُمَربن عبدُ العزیز رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کی ظاہِری حیات کے آخِری لمحات میں حاضِر ہوئے اور کہا: اے اَمیرُ المؤمنین رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ!  آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ بھی بے مِثال زندَگی گزار کر دُنیا سے تشریف لے جارہے ہیں ،   آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہکے 13بچّے ہیں لیکن وِراثت میں اُن کے لئے کوئی مال و اسباب نہیں چھوڑا! یہ سن کرحضرتِ سیِّدُنا عمرَبن عبد العزیز رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ نے اِرشاد فرمایا:  میں نے اپنی اَولاد کا حق روکا نہیں اور دوسروں کا اِن کو دیا نہیں اور میری اَولاد کی دو حالَتیں ہیں اگر وہ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  کی اِطاعت کریں گے تو وہ اُن کو کِفایَت فرمائے گا کیونکہ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  نیک لوگوں کوکِفایَت فرماتا ہے اور اگر میری اولاد نافرمان ہوئی تو مجھے اِس بات کی پرواہ نہیں کہ میرے بعدمالی اعتبار سے اُن کی زندَگی کیسے گزرے گی۔    (اِحیاءُ الْعُلومج۳ص۲۸۸

اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  کی اُن پر رَحمت ہو اور اُن کے صَدقے ہماری بے حساب مَغْفِرَت ہو۔  اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  یہاں یہ یاد رہے کہ اگر کسی کے پاس مال ہے تو اسے یہی حکم ہے کہ  صَدَقہ کرنے کے بجائے اولاد کی ضَرورت کے لئے رکھ چھوڑے ۔  

مِرے غوث کا وسیلہ، رہے شاد سب قبیلہ

               اِنہیں خُلد میں بسانا،   مَدَنی مدینے والے   (وسائلِ بخشش ص۱۶۰) 

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!      صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

آزمائش میں کامیابی کی صورت

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  بِلاحاجت دُنیوِی مال ودولت جمع کرنے کا جذبہ قابلِ تعریف نہیں اور جسے اللہ  عَزَّوَجَلَّنے بکثرت دُنیوی دولت عنایت فرمائی ہو اُس کیلئے کامیابی کی صورت یِہی ہے کہ وہ اُس کو اللہ و رسول  عَزَّ وَجَلَّ و صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی اطاعت کے مطابِق خَرچ کر کے نیکیوں کی دولت میں اِضافہ کرے چُنانچِہ دعوتِ اسلامی کے اِشاعتی ادارے مکتبۃُ المدینہ کی مطبوعہ 417 صفْحات پر مُشتمِل مُنْفَرِد کتاب  ’’ لُبابُ ا  لاِحیاء‘‘  صَفْحَہ258 پر ہے:  حضرتِ سیِّدُنا عیسیٰ رُوحُ اللہ عَلٰی نَبِیِّناوَعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامنے اِ رشاد فرمایا:  ’’ دُنیا کو آقا نہ بناؤ ورنہ وہ تمہیں غلام بنا لے گی،   اپنا مال اُس ذات کے پاس جمع کرو جس کے پاس سے ضائِع نہیں ہوتا کیونکہ جس کے پاس دُنیا کا خزانہ ہو اُسے  (چوری ہو نے یا چِھن جانے وغیرہ کی )   آفت کا ڈر ہوتا ہے، لیکن  (صدقہ وخیرات کر کے)   اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  کے پاس اپنا مال جمع کرانے والے کو کسی قسم کا خطرہ نہیں ہوتا۔  ‘‘     ( لُبابُ الاِحیاءُ  (عربیص۲۳۱ماخوذاً  دارالبیروتی دمشق

تِرے غم میں کاش عطّارؔ، رہے ہر گھڑی گرِفتار

غمِ مال سے بچانا،  مَدَنی مدینے والے

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!      صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

آفات سے نَجات کا ذَرِیْعہ

 



Total Pages: 13

Go To