Book Name:Kamyab Talib e Ilm kaun?

        (۵)شعبۂ تفتیشِ کُتُب

        (۶)شعبۂ تخریج   

’’ا لمد ینۃ العلمیۃ‘‘کی اوّلین ترجیح سرکارِ اعلٰیحضرت اِمامِ اَہلسنّت، عظیم البَرَکت، عظیمُ المرتبت، پروانۂ شمعِ رِسالت، مُجَدِّدِ دین و مِلَّت، حامیٔ سنّت ، ماحیٔ بِدعت، عالِمِ شَرِیْعَت، پیرِ طریقت، باعثِ خَیْر و بَرَکت، حضرتِ علاّمہ مولیٰنا الحاج الحافِظ القاری الشّاہ امام اَحمد رَضا خانعَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن کی گِراں مایہ تصانیف کو عصرِ حاضر کے تقاضوں کے مطابق حتَّی الْوُسعسَہْل اُسلُوب میں پیش کرنا ہے ۔تمام اسلامی بھائی اور اسلامی بہنیں اِس عِلمی ، تحقیقی اور اشاعتی مدنی کام میں ہر ممکن تعاون فرمائیں اورمجلس کی طرف سے شائع ہونے والی کُتُب کا خود بھی مطالَعہ فرمائیں اور دوسروں کو بھی اِ س کی ترغیب دلائیں ۔

         اللہ  عَزَّ وَجَلَّ ’’دعوتِ اسلامی‘‘ کی تمام مجالس بَشُمُول’’المد ینۃ العلمیۃ‘‘ کو دن گیارہویں اور رات بارہویں ترقّی عطا فرمائے اور ہمارے ہر عملِ خیر کو زیورِ اخلاص سے آراستہ فرماکر دونوں جہاں کی بھلائی کا سبب بنائے۔ہمیں زیرِ گنبدِ خضراء  شہادت، جنّت البقیع میں مدفن اور جنّت الفردوس میں جگہ نصیب فرمائے ۔

                              اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                   رمضان المبارک ۱۴۲۵ھ

پیش لفظ

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!

                تبلیغ ِ قرآن وسنت کی عالمگیر تحریک دعوتِ اسلامی کی مجلس المدینۃ العلمیۃ (شعبہ اصلاحی کتب)کی طرف سے ایک اور کتاب ’’کامیاب طالب علم کون؟‘‘ آپ کے سامنے ہے ۔ اس مختصر کتاب میں ان تمام امور کا احاطہ کرنے کی کوشش کی گئی ہے جن کا تعلق ایک طالبُ العلم سے ہوسکتا ہے مثلاًحصول ِ علم میں کیا نیت ہونی چاہیے ؟ اسباق کا مطالعہ کس طرح کرنا چاہئیے؟عربی عبارت پر اعراب کس طرح جاری کئے جائیں ؟ سبق یاد کس طرح کیا جائے ؟ اپنے اساتذہ ، جامعہ کی انتظامیہ اور والدین کے ساتھ تعلقات کی نوعیت کیا ہونی چاہئیے؟

         اس کتاب کو نہ صرف خود پڑھئے بلکہ دوسرے اسلامی بھائیوں بالخصوص طلبہ کو اس کے مطالعہ کی ترغیب دے کر ثواب ِ جاریہ کے مستحق بنئے ۔ اللہ  تَعَالٰی سے دعا ہے کہ ہمیں ’’اپنی اور ساری دنیا کے لوگوں کی اصلاح کی کوشش‘‘ کرنے کے لئے مدنی انعامات پر عمل اور مدنی قافلوں کا مسافر بنتے رہنے کی توفیق عطا فرمائے اور دعوت ِ اسلامی کی تمام مجالس بشمول مجلس المدینۃ العلمیۃ  کو دن گیارہویں رات بارہویں ترقی عطا فرمائے ۔

اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم   

شعبہ اصلاحی کتب (مجلس المدینۃ العلمیۃ )

 

 

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط                                                                              

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ  اللہ  الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

 دُرُودِ پاک کی فضیلت

        رحمت ِ عالم نورِ مجسم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہِ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا : ’’اے لوگو! بے شک بروز قِیامت ا س کی دَہشتوں اورحساب کتاب سے جلد نجات پانے والا شخص وہ ہوگا جس نے تم میں سے مجھ پر دنیا کے اندر بکثرت دُرُود شریف پڑھے ہوں گے ۔‘‘ (فردوس الاخبار ، الحدیث ۸۲۱۰ ، ج۲ ، ص ۴۷۱)

صلوا علی الحبیب   صلی اللّٰہ تعالٰی علٰی محمد

 مَدَنی اِلتجاء

        حضرت ِ سیدناامام فخر الدین رازی  عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْوَالِی  اپنی مایہ ناز تفسیر ’’تفسیر کبیر ‘‘میں زیرِ آیت

وَ عَلَّمَ اٰدَمَ الْاَسْمَآءَ كُلَّهَا

ترجمہ کنزالایمان : اور  اللہ  تَعَالٰی نے آدم کو تمام نام سکھائے ۔۱، البقرۃ : ۳۱) ‘‘نقل فرماتے ہیں :

  سرکارِ دوعالم ، نورِ مجسم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہِ وَسَلَّمَ ایک صحابی رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُسے محوِ گفتگو تھے کہ آپ پر وحی آئی کہ اس صحابی کی زندگی کی ایک ساعت  باقی رہ گئی ہے ۔ یہ وقت عصر کا تھا ۔ رحمت ِ عالم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہِ وَسَلَّمَ نے جب یہ بات اس صحابی کو بتائی تو انہوں نے مضطرب ہوکر التجاء کی :  ’’یارسول  اللہ  صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ ! مجھے ایسے عمل کے بارے میں بتائیے جو اس وقت میرے لئے سب سے بہتر ہو۔‘‘ تو آپ نے فرمایا : ’’ علمِ دین سیکھنے میں مشغول ہوجاؤ ۔‘‘ چنانچہ وہ صحابی رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ علم سیکھنے میں مشغول ہوگئے اور مغرب سے پہلے ہی ان کا انتقال ہوگیا ۔ راوی فرماتے ہیں



Total Pages: 22

Go To