Book Name:Wasail e Bakhshish

ہو غمِ مُصطَفٰے عطا یارب!                            درد بڑھتا رہے مدینے کا

نَزع میں  ، قبر میں  ، قِیامت میں                      تم ہی رکھنا بھرم کمینے  کا

دُور رَنج و اَلَم ہوں   دُنیا کے                          ہم کو مل جائے غم مدینے کا

لُطْف سے ہے تِرے بھرم ورنہ                    کام کوئی نہیں   قرینے کا

ایک مدّت سے دل میں   اَرماں   ہے                 یانبی! جامِ دید پینے کا

موت گر آئے تیرے قدموں   میں                 لُطف آجائے پھر تو جینے کا

اپنے عطارؔ پر کرم کر دو

سگ بنا لو اسے مدینے کا

 

مدینے کی طرف پھر کب روانہ قا فِلہ ہوگا

مدینے کی طرف پھر کب روانہ قافِلہ ہوگا

مجھے اِذنِ مدینہ کب مرے آقا عطا ہوگا

یقینا روزِ محشر صِرف اُسی سے خوش خدا ہوگا

یہاں   دنیا میں   جس نے مصطَفٰے کو خوش کیا ہوگا

وُہی سَر بَر سرِ محشر بُلندی پائے گا جو سر

یہاں   دنیا میں   ان کے آستانے پرجُھکا ہوگا

کوئی ہفتہ نہ کوئی دن کوئی گھنٹا تو کیا افسوس

کوئی لمحہ بھی عِصیاں   سے نہیں   خالی گیا ہوگا

نہیں   جاتی گناہوں   کی شہا! عادت نہیں   جاتی

کرم مولیٰ پسِ مُردَن نہ جانے میرا کیا ہوگا

فَقَط نیکوں   پہ ہوگا گر کرم اے سروَرِعالم!

کہاں   جا ئے گا وہ بندہ جو بد ہوگا بُرا ہوگا

 

تِرے رَحم و کرم پر آس میں   نے باندھ رکھی ہے

بڑی اُمّید ہے آقا! کرم روزِ جزا ہوگا

 

 



Total Pages: 406

Go To