Book Name:Wasail e Bakhshish

لاتی ہے سرِ بالیں  ([1])رحمت کی ادا اُن کو

جس وقت تڑپتا ہے بیمار مدینے کا

 

روتے ہیں   جو دیوانے بے تاب ہیں   مستانے

ان سب کو دکھا دیجے دربار مدینے کا

روتا ہے جو راتوں   کو اُمّت کی مَحبَّت میں   

وہ شافِعِ محشر ہے سردار مدینے کا

راتوں   کو جو روتا ہے اور خاک پہ سوتا ہے

غم خوار ہے، سادہ ہے مختار مدینے کا

قبضے میں   دو عالَم ہیں   پَر ہاتھ کا تکیہ ہے

سوتا ہے چٹائی پر سَردار مدینے کا

دُکھ دَرد جہاں   بھر کے سب دُور شہا کرکے

مجھ کو تو بنا لیجے بیمار مدینے کا

اِس در کے بھکاری کی جھولی میں   دو عالَم ہیں 

شاہوں   سے بھی بڑھ کر ہے نادار مدینے کا

مقبول جہاں   بھر میں   ہو’’دعوتِ اسلامی ‘‘

صدقہ تجھے اے ربِّ غفّار! مدینے کا

تقدیر چمک اٹّھے قسمت ہی تو کُھل جائے

بن جائے جو ادنیٰ سگ ، عطارؔ مدینے کا

 

اِذن مل جائے گر مدینے کا

اِذن مل جائے گر مدینے کا                         کام بن جائے گا کمینے کا

جاکے اُن کو دکھاؤں   گا میں   تو                      زخمِ دل اور داغ سینے کا

قلبِ عاشِق اُٹھا دھڑک اِک دم                   ذِکر جب چِھڑگیا مدینے کا

آنکھ سے اَشک ہوگئے جاری                       جب چلا قافِلہ مدینے کا

اُس کی قسمت پہ رَشک آتا ہے                     جو مُسافِر ہوا مدینے کا

تجھ پہ رَحمت ہو زائرِ طیبہ!                          جا، نِگہباں   خدا سفینے کا

ہم کو بھی وہ بُلائیں   گے اِک دن                    اِذن مل جائے گا مدینے کا

 



[1]     سِرہانے ۔



Total Pages: 406

Go To