Book Name:Wasail e Bakhshish

فخرو غُرور سے تُو مولیٰ مجھے بچانا                یارب! مجھے بنا دے پیکر تُو عاجِزی کا

ایماں  پہ ربِّ رَحمت دیدے تُواستِقامت        دیتا ہوں   واسِطہ میں   تجھ کو ترے نبی کا

ہو ہر نَفَس([1])  مدینہ دھڑکن میں   ہو مدینہ    جب تک نہ سانس ٹوٹے سرکار زندَگی کا

دنیا کے تاجدارو! تم سے مجھے غَرَض کیا!      منگتا ہوں   میں   تو منگتا سرکار کی گلی کا

اللّٰہ!اِس سے پہلے ایماں  پہ موت دیدے       نقصاں   مِرے سبب سے ہو سنّتِ نبی کا

الفت کی بھیک دیدو دیتا ہوں   واسِطہ میں           صِدّیق کا عمر کا عثمان کا علی کا

کچھ نیکیاں   کمالے جلد آخِرت بنالے         کوئی نہیں   بھروسا اے بھائی! زندَگی کا

مِیزاں ([2])پہ سب کھڑے ہیں   اعمال تُل رہے ہیں

رکھ لو بھرم خدارا! عطّارؔ قادِری کا

 

آیاہے بُلاوا پِھراِک بار مدینے کا

آیا ہے بُلاوا پِھر اِک بار مدینے کا

پھر جاکے میں   دیکھوں   گا دربار مدینے کا

گلشن سے حَسیں   تر ہے کُہسار مدینے کا

بے مثل جہاں   میں   ہے گلزار مدینے کا

میں   پُھول کو چُومونگااور دُھول کو چُومونگا

جس وقت کروں   گا میں   دیدار مدینے کا

آنکھوں   سے لگالوں   گا اور دل میں   بَسالوں   گا

سینے میں   اُتاروں   گا میں   خار([3])مدینے کا

سینے میں   مدینہ ہو اور دل میں   مدینہ ہو

آنکھوں   میں   بھی ہو نقشہ سرکار! مدینے کا

 

 



[1]     سانس ۔

[2]     تَرازو ۔

[3]     کانٹا ۔



Total Pages: 406

Go To