Book Name:Wasail e Bakhshish

قسمت مِری چمکائیے چمکائیے آقا

قسمت مِری چمکائیے چمکائیے آقا       مجھ کو بھی درِ پاک پہ بُلوائیے آقا

سینے میں   ہو کعبہ تو بسے دل میں   مدینہ      آنکھوں   میں   مری آپ سما جائیے آقا

بے تاب ہوں   بے چَین ہوں   دیدار کی خاطر   لِلّٰہ  مِرے  خواب  میں    آجائیے   آقا

ہر سَمت سے آفات و بَلِیّات نے گھیرا        مجبور کی اِمداد کو اب آئیے آقا

سکرات کا عالَم ہے شَہا! دم ہے لبوں   پر       تشریف سِرہانے مِرے اب لائیے آقا

وَحشت ہے اندھیرا ہے مری قَبْر کے اندر      آکر ذرا روشن اِسے فرمائیے آقا

مُجرِم کو لئے جاتے ہیں   اب سُوئے جہنَّم     لِلّٰہِ!  شَفاعت  مِری  فرمائیے  آقا

عطّارؔ پہ یا شاہِ مدینہ ہو عِنایت

وِیرانۂ دل آ کے بسا جائیے آقا

اسراف کی تعریف

غیرِ حق میں صرف(یعنی خرچ )کرنا۔(فتاوی رضویہ مُخرَّجہ ج۱ص۶۹۰رضافاؤنڈیشن مرکزالاولیا لاہور)مثلاً نافرمانی کی جگہوں پرخرچ کرنا۔

 

یا مصطَفٰے عطا ہو اب اِذن حا ضِری کا

(اَلْحَمْدُ لِلّٰہ ۲۰ شعبانُ المعظَّم ۱۴۱۴ھ کو یہ کلام قلمبند کیا گیا)

یامصطَفٰے عطا ہو اب اِذن، حاضِری کا           کرلوں   نظارہ آکر میں   آپ کی گلی کا

اِک بار تو دِکھا دو رَمَضان میں   مدینہ           بیشک بنالو آقا مِہمان دو گھڑی کا

روتا ہوا میں   آؤں   داغِ جگر دکھاؤں             افسانہ بھی سناؤں   میں   اپنی بیکسی کا

میں   سبز سبز گنبد کی دیکھ لوں   بَہاریں            اب اِذن دیدو آقا تم مجھ کو حاضِری کا

مولیٰ غمِ مدینہ دیدے غمِ مدینہ                دیوانہ تُو بنا دے مجھ کو تِرے نبی کا

خونِ جگر سیسِینچاہے باغ سُنِّیَتکا             کردو کرم وَسیلہ اُس مَدَنی مُرشِدی کا

یاسیِّدِ مدینہ! بس آپ ہی نبھانا                 گو ہوں   بڑا کمینہ پرہوں   تو آپ ہی کا

یامصطَفٰے! گُناہوں   کی عادَتیں   نکالو              جذبہ مجھے عطا ہو سنّت کی پَیروی کا

ہوں   دُور اب بلائیں  دیتا ہوں   واسِطہ میں           مظلومِ کربلا کی سرکار! بیکسی کا

اللّٰہ! حُبِّ دنیا سے تُو مجھے بچانا                 سائل ہوں   یاخدا میں   عشقِ محمدی کا

 



Total Pages: 406

Go To