Book Name:Wasail e Bakhshish

کیا عمامے کی ہو بیاں   عظمت            تیرے نعلین تاجِ سر آقا

تیرے ہوتے ہوئے بھلا کیوں   ہو      وار دُشمن کا کارگر آقا

اِس طرح سے چھپا لو دامن میں          نہ عَدو کی پڑے نظر آقا

مُعترِف ہوں   گناہ کرنے میں             کوئی چھوڑی نہیں   کسر آقا

پھنس گیا ہوں   گنہ کی دلدل میں       ہو کرم شاہِ بحروبر آقا

میں   گنہگار ہوں   مگر قرباں              تیری رحمت کی ہے نظر آقا

واسِطہ میرے غوثِ اعظم کا          ہر خطا کر دو در گزر آقا

تم اُسے بھی گلے لگاتے ہو            جس کو دُھتکارے ہر بشر آقا

میں   جہنَّم میں   گِر گیا ہوتا             نہ بچاتے مجھے اگر آقا

کاش! نیچی نظر رہے، بے کار        میں   نہ دیکھوں   اِدھر اُدھر آقا

جان چُھوٹے فُضُول باتوں   سے       از پئے حضرت عمر آقا

مولیٰ مشکلکشا کے صدقے میں          استِقامت دو دِین پر آقا

ازپئے مرشِدی ضِیاء الدّین          میرے دل میں   بناؤ گھر آقا

کاش! اِس شان سے یہ دم نکلے       تیری دَہلیز پر ہو سر آقا

اِذن دیدو بقیعِ غَرَقد کا                 تیرے جلووں   میں   جاؤں   مَر، آقا

کیا بنے گا بجائے طیبہ کے            سندھ میں   مر گیا اگر آقا

موت عطارؔ کو مدینے میں

آئے اب تو نہ جائے گھر آقا

 

صاحبِ عزت و جلال آقا

صاحبِ عزّت و جلال آقا                                 تُو ہے با عَظمت و کمال آقا

ہر صِفت تیری لازوال([1])آقا                             بالیقیں   تُو ہے بے مثال آقا

میں   ہوں   بدخُلق و بدخِصال([2])آقا                         تم ہو خوش خُلق و خوش مَقال([3]) آقا

 



[1]     جس میں   کبھی کمی نہ آئے ۔

[2]     بری عادتوں   والا ۔

[3]     عمدہ گفتگو ۔



Total Pages: 406

Go To