Book Name:Wasail e Bakhshish

 

کس طرح مدینے میں  مِرا داخِلہ ہوگا      آلودہ وُجود آہ! گناہوں   سے ہے سارا

اے کاش! مِری آنکھ ہو دیدار کے قابل      جی بھر کے کروں   گنبدِ خَضرا کا نظارا

مرنے دو مدینے میں   مجھے قافِلے والو       اے چارہ گرو! تم بھی نہ کرنا کوئی چارہ

ہم جائیں   کہاں   اور شہا کس کو پکاریں          ہمدرد نہیں   تیرے سوا کوئی ہمارا

دُکھیوں   کا نہیں   تیرے سوا کوئی بھی ہَمدَم      ہے کس کو غَرَض دُور کرے دَرد ہمارا

گو بد ہوں   گنہگار ہوں   بدکار بُرا ہوں           جیسا بھی ہوں   سرکار تمھارا ہوں   تمہارا

ہم کیوں   کریں   حُکّام کی اُمرا کی خوشامد        جب آپ کے ٹکڑوں   پہ ہمارا ہے گزارا

شیطان نے بہکا کے گناہوں   میں   پھنسایا       اور نفسِ بداَطوار نے عِصیاں   پہ اُبھارا

عِصیاں   کے سمندر میں   پھنسی ناؤ ہماری       تم آکے سنبھالو ہے بَہُت دُور کَنارا

افسوس! گناہوں   سے ہے پُر نامۂ اعمال       رکھئے گا مِری لاج قِیامت میں   خُدارا

عطارؔ کا بس آپ کے ہاتھوں   میں   بھرم ہے

کہہ دیجئے عطارؔ ہمارا ہے ہمارا

فرمانِ مصطفی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم:جو کسی مسلمان  کو بھوک میں کھاناکھلاکر سیر کردے  تو اللہ تعالی اُسے جنت میں اُس دروازے سےداخل فرمائے گا جس سےاس جیسےلوگ ہی داخل ہونگے۔(المعجم الکبیر ، ج۲۰، ص۸۵، الحدیث:۱۶۳)

 

آج طیبہ کا ہے سفر آقا

آج طیبہ کا ہے سفر آقا                 دے دو توشے میں   چشمِ تر آقا

غمزدہ ہوں   میں   کس قَدَر آقا           تم کو میری ہے سب خبر آقا

مجھ کو بیماریوں   نے گھیرا ہے             آپ ہیں   میرے چارہ گر آقا

چند اَشکوں   کے ماسِوا پلّے               کچھ نہیں   تَوشۂ سفر آقا

تاجِ شاہی کا میں  ، نہیں   طالِب          کردو رحمت کی اِک نظر آقا

تیری الفت کا میں   بھکاری ہوں          میرا کشکول جائے بھر آقا

قلبِ مُضطَر دو چشمِ تر دو اور            چاک سینہ تَپاں   جگر آقا

’’چل مدینہ‘‘ کا وہ بھی لیں   مُثردہ      جن کے پلّے نہیں   ہے زَر آقا

 



Total Pages: 406

Go To