Book Name:Wasail e Bakhshish

ایسے برباد ہوں  ، پھر نہ آباد ہوں                دشمنانِ خدا، یارسولِ خدا

جس قَدَر حاسِدیں  ، ہیں   مرے شاہِ دیں        سب کا دل ہو صَفا، ([1]) یارسولِ خدا

ہو نگاہِ کرم، تاجدارِ حرم                      واسطہ غوث کا یارسولِ خدا

میں   سراپا خطا، ہُوں   بڑا رُوسیاہ                 حشر میں   ہوگا کیا، یارسولِ خدا

یاشفیعِ اُمَم، تم ہی رکھنا بھرم                   روزِمحشر مِرا، یارسولِ خدا

سرورِ کائنات، اپنی جنَّت میں   ساتھ           لے کے چلنا شہا، یارسولِ خدا

شاہِ دنیا و دیں  ، کام کرتا نہیں                    ذِہن عطارؔ کا، یارسولِ خدا

ہو کرم یانبی، پار بیڑا ابھی

ہوگا عطارؔ کا، یارسولِ خدا

 

عطّاؔر نے دربار میں   دامن ہے پَسارا

عطّاؔر نے دربار میں   دامن ہے پَسارا         ہے اِذنِ مدینہ کا طلب گار بچارا

چمکا دو شہا! میرے مقدَّر کا ستارا              پھر حج کا شَرَف مجھ کو عطا کردو خدارا

میں   سالِ گُزَشتہ بھی تو آیا تھا مدینے        اِس سال بھی ہو جائے مدینے کا نظارا

مکّے کی حسیں  شام کی دیکھوں  میں  بہاریں      پھر دیکھوں   مدینے کی شہا صبحِ دل آرا

’’سامانِ مدینہ‘‘ تو شہا! لاکے رکھا ہے     اب دے دو سفر کا بھی ہمیں   اِذن خدارا

مایوس نہیں   تم سے یہ دیوانے تمہارے   اب کردو کرم تم نہ کرو دیر خدارا

تاخیر ہوئی جاتی ہے کیوں   کوچ میں   آخِر؟     تشویش میں   طیبہ کا مسافِر ہے بچارا

بگڑا ہوا ہر کام سنور جائے گا میرا           کر دیں   گے شہا! آپ جو  اَبرُو کا اشارہ

سرکار! مدینے میں   اِسی سال بُلالو           اے شاہ! بڑی آس سے ہے تم کو پکارا

یارب ہمیں   مکے کی فَضاؤں   میں   بُلالے       اور خانۂ کعبہ کا کریں   جم کے نظارا

ہو جائے مِری حاضِری عرفات و مِنٰی میں       اور مُزدَلِفہ کا بھی کروں   خوب نظارا

جو ہجرِ مدینہ میں   تڑپتے ہیں   شب و روز        کرلیں   کبھی طیبہ کا شہا! وہ بھی نظارا

 



[1]     روشنی ۔



Total Pages: 406

Go To