Book Name:Wasail e Bakhshish

افسوس نَدامت بھی عِصیاں   پہ نہیں   ہوتی

نیکی کی طرف مائل عطارؔ نہیں   ہوتا

آقا کا گدا ہو کر عطارؔ تُو گھبرائے

گھبرائے وُہی جس کا غمخوار نہیں   ہوتا

 

مدینے ہمیں   لے گیا تھا مقدَّر مدینے میں   کیسا سُرُورآرہا تھا

(۴محرم الحرام ۱۴۱۶؁ ھ کو سفرِ مدینہ سے واپسی ہو ئی، ۷محرم الحرام ۱۴۱۶ھ کو اپنے جذبات کو اشعار کے سانچے میں   ڈھالا)

مدینے ہمیں   لے گیا تھا مقدَّر                  مدینے میں   کیسا سُرُور آ رہا تھا

نہ ہم کاش! آتے یہاں   لوٹ کر گھر            مدینے میں   کیسا سُرُور آ رہا تھا

وہاں   بارِشِ نور ہوتی تھی پَیہم                  نہ دنیا کی جھنجٹ زمانے کا تھا غم

ملا تھا ہمیں   قُربِ محبوبِ داور                 مدینے میں   کیسا سُرُور آ رہا تھا

خوشی بھی خوشی سے وہاں   جھومتی تھی       مَسرَّت مِرے چَوطرف گھومتی تھی

مزہ بھی مزے لے رہا تھا وہاں   پر              مدینے میں   کیسا سُرُور آرہا تھا

کبھی رُوبرو سبز گنبد کا منظر                     کبھی تکتے ہم ان کے دیوار اور در

کبھی سامنے ہوتے مِحراب و مِنبر               مدینے میں   کیسا سُرُور آرہا تھا

وہاں   راہ چلتے تھے ہم دست بستہ               دُرُود اُن پہ پڑھتے کبھی سارا رَستہ

کبھی نعت پڑھتے تھے ہم راستے بھر          مدینے میں   کیسا سُرُور آرہا تھا

کبھی بیٹھتے اُن کی مسجِد میں   جا کر                 کبھی دُور سے تکتے محراب و مِنبر

نَمازوں   کا بھی لُطف تھا کیا وہاں   پر             مدینے میں   کیسا سُرُور آرہا تھا

فَضائیں   مُنوَّر ہوائیں   مُعَطَّر                            سماں   تھا وہاں   کس قَدَر کیف آور

جہاں   میں   کہیں   بھی نہیں   ایسا منظر                  مدینے میں   کیسا سُرُور آ رہا تھا

مدینے کا صحرا بھی رشکِ گُلستاں                     تَصَدُّق مُغِیلاں  ([1])پہ بادِ بہاراں

تنی تھی پہاڑوں   پہ نورانی چادر                       مدینے میں   کیسا سُرُور آ رہا تھا

کبھی مست ہو کر شجر جھومتے تھے                  تو جھڑ جھڑ کے پتّے زمیں   چومتے تھے

اٹھا لیتے ان کو کبھی ہم بھی بڑھ کر                   مدینے میں   کیسا سُرُور آرہا تھا

 



[1]     کانٹے دار جھاڑی یا کانٹے دار درخت   ۔



Total Pages: 406

Go To