Book Name:Wasail e Bakhshish

ڈوبا رہتا ہے مدینہ روشنی میں   ہر گھڑی

شام  ہو  یا  ہو  سَحر([1])   میٹھا  مدینہ  مرحبا

نور برساتے مَنارے سبز گنبد کی بہار

دل ہو روشن دیکھ کر میٹھا مدینہ مرحبا

جانتے ہو سبز گنبد کیوں   حسیں   ہے اس قَدَر

اس میں   ہے آقا کا گھر میٹھا مدینہ مرحبا

پھول مہکے، دھول چمکے، خوبصورت ہر بَبُول

پُرکشش ہر  اِک   حَجر([2])  میٹھا  مدینہ  مرحبا

پَوپھٹی تَڑکا ہوا اور چہچہائیں   بُلبُلیں 

ہے سماں   رنگین تر میٹھا مدینہ مرحبا

 

جبکہ چلتی ہے صَبا آقا کا روضہ چوم کر

جھوم اٹھتے ہیں   شَجر میٹھا مدینہ مرحبا

بَرق ([3])چمکی، لہر اُبھری، اَبر([4]) برسا اور گیا

گنبدِ خَضرا نکھر میٹھا مدینہ مرحبا

عظمتیں   ہیں   رِفعتیں   ہیں   نعمتیں   ہیں   بَرَکتیں 

رحمتیں   ہیں   ہر ڈَگر میٹھا مدینہ مرحبا

پھول تو پھر پھول ہیں   کانٹے بھی اسکے حُسن میں 

خوب سے ہیں   خوب تر میٹھا مدینہ مرحبا

سنگریزوں  ([5]) کی چمک کے سامنے سب ہیچ ہیں 

دُنیوی لَعل و گُہَر میٹھا مدینہ مرحبا

ہیں   فَضائیں  خوشگوار اس کی ہوائیں   مُشکبار

ہے مُعطَّر کس قَدَر میٹھا مدینہ مرحبا

اس لئے تو ہم کو پیارا ہے مدینہ رہتے ہیں 

اِس میں   شاہِ بحروبر میٹھا مدینہ مرحبا

خُلد کی رنگینیاں   شادابیاں   تسلیم ہیں 

یہ سب اپنی جا مگر میٹھا مدینہ مرحبا

 



[1]     صبح ۔

[2]     پتھر ۔

[3]     بجلی ۔

[4]     بادَل ۔

[5]     پتھر کے ٹکڑوں  ۔



Total Pages: 406

Go To