Book Name:Wasail e Bakhshish

جو نظر آرہی ہے ہر جانِب                   سب بہار اُن کے دم قدم کی ہے

میرے مولیٰ غمِ مدینہ ہی                    آبرو میری چشمِ نَم کی ہے

سوزِشِ سینہ و جگر دے دے               آرزو مجھ کوچشمِ نَم کی ہے

خُوں   رُلائے سدا تِری اُلفت                آرزو ایسی چشمِ نَم کی ہے

آفتوں   سے  بچالے  یااللّٰہ                     مجھ پہ یَلغار([1])رنج وغم کی ہے

بگڑی تقدیر ابھی سنور جائے               دیر اِک جُنبِشِ قلم کی ہے

’’قافِلوں  ‘‘ میں   سفر کرو یارو!               بالیقیں   راہ یہ اِرَم کی ہے

سارے اپناؤ’’مَدنی اِنعامات‘‘                      گر تمہیں   آرزو اِرَم کی ہے

لائِقِ نار ہیں   مِرے اعمال                    التِجا یاخدا کرم کی ہے

اپنی اُمّت کی مغفِرت ہوجائے             آرزو شافِعِ اُمَم کی ہے

بخش دے اب تو مجھ کو یااللّٰہ                 یہ دُعا تجھ سے چشمِ نم کی ہے

دے دے ’’قُفلِ مدینہ‘‘ یااللّٰہ             ہو کرم التِجا کرم کی ہے

کاش! ہر سال حج کرے عطارؔ

عرض بدکار پر کرم کی ہے

نعتیہ شاعری کرنا کیسا؟

سُوال: نعتیہ شاعری کرنا کیسا ہے؟

جواب:  سنّتِ صَحابہ عَلَیہِمُ الرِّضوانہے یعنی بعض صَحابہ مَثَلاً حسّان بن ثابت  رضی اللّٰہ تعالٰی عنہ اور حضرت سیِّدُنا زید رضی اللّٰہ تعالٰی عنہ وغیرھما سے نعتیہ اشعار لکھنا ثابت ہے۔ تاہم یہ ذِہن میں   رہے کہ نعت شریف لکھنا نہایت مُشکِل فن ہے، اِس کے لیے ماہِرِ فَن عالِمِ دین ہونا چاہئے، ورنہ عالِم نہ ہونے کی صورت میں   رَدیف، قافِیہ اوربَحر(یعنی شعر کا وزن)وغیرہ کو نبھانے کیلئے خلافِ شان الفاظ ترتیب پا جانے کا خَدشہ رہتا ہے۔ عوامُ النّاس کو شاعِر ی کا شوق چَرانا مناسِب نہیں   کہ نَثر کے مقابلے میں   نَظم میں   کُفرِیّات کے صُدُورکازیادہ اندیشہ رَہتا ہے۔اگر شرعی اَغلاط سے کلام محفوظ رہ بھی گیا تو’’ فُضولیات ‘‘ سے بچنے کا ذِہن بَہُت کم لوگوں   کا ہوتا ہے۔ جی ہاں   آج کل جس طرح عام گفتگو میں   فُضول الفاظ کی بھر مار پائی جاتی ہے اِسی طرح’’بیان‘‘ اور ’’نعتیہ کلام‘‘ میں   بھی ہوتا ہے۔ (کفریہ کلمات کے بارے میں   سوال جواب ص۲۳۲ مکتبۃ المدینہ )

 

 



[1]     یہاں   ’’سیلاب‘‘ کی جگہ حسبِ حال’’ مہنگائی‘‘ بھی پڑھ سکتے ہیں  ۔



Total Pages: 406

Go To