Book Name:Wasail e Bakhshish

ایک غمگین دل کی صدا ہے           یاخدا تجھ سے میری دُعا ہے

میری جان آفتوں   سے چھڑانا       مُوذی اَمراض سے بھی بچانا

تجھ کو صِدّیق کا واسِطہ ہے             یاخدا تجھ سے میری دُعا ہے

و عَطا حِلم کی بھیک کر دے            میرے اَخلاق بھی ٹھیک کر دے

تجھ کو فاروق کا واسِطہ ہے              یاخدا  تجھ سے میری دُعا ہے

گو یہ بندہ نکمّا ہے بیکار                  اِس سے لے فَضل سے ربِّ غفّار

کام وہ جس میں   تیری رِضا ہے          یاخدا تجھ سے میری دُعا ہے

تیرے پیارے کی دُکھیاری اُمّت        پر ہے سیلاب([1])کی آئی آفت

رحم کر بس تِرا آسرا ہے               یاخدا تجھ سے میری دُعا ہے

ہر طرف سے بلاؤں   نے گھیرا       آفتوں  نے لگایا ہے ڈَیرا

تُوہی اب میرا حاجت رَوا ہے        یاخدا تجھ سے میری دُعا ہے

اُس کی جھولی مُرادوں   سے بھردے     اُس کے حق میں   جو بہتر ہو کردے

جس نے مجھ سے دُعا کا کہا ہے           یاخدا تجھ سے میری دُعا ہے

عِشقِ احمد میں   آنسو بہاؤں             حُبِّ دُنیا سے خود کو بچاؤں

ایسی توفیق دے اِلتجا ہے               یاخدا تجھ سے میری دُعا ہے

میری دشمن سے فرما حِفاظت        دین و ایماں   بھی رکھنا سلامت

دَست بستہ مِری اِلتجا ہے               یاخدا تجھ سے میری دُعا ہے

مِہرباں   تُو ہی، تُو ہی مددگار            اُس دکھی دِل کا تو حامیِ کار

جس کو دُنیا نے ٹھکرا دیا ہے          یاخدا تجھ سے میری دُعا ہے

سخت گوئی کی مٹ جائے خَصلَت         نَرم گوئی کی پڑجائے عادت

واسِطہ خُلقِ محبوب کا ہے               یاخدا تجھ سے میری دُعا ہے

سُنّتوں  کی کروں   خوب خدمت          ہر کسی کو دوں   نیکی کی دعوت

نیک میں   بھی بنوں   اِلتجا ہے            یاخدا تجھ سے میری دُعا ہے

 



[1]     یہاں   ’’سیلاب‘‘ کی جگہ حسبِ حال’’ مہنگائی‘‘ بھی پڑھ سکتے ہیں  ۔



Total Pages: 406

Go To