Book Name:Wasail e Bakhshish

بات عِصیاں  سے میں  نے بگاڑی          دل کی ہاتھوں   سے بستی اُجاڑی

لُطف و رَحمت کی عَفو([1])و عطا کی                 میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

تیرے ڈر سے سدا تھر تھراؤں        خوف سے تیرے آنسو بہاؤں 

کیف ایسا دے، ایسی ادا کی              میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

مکرِ شیطان سے تو بچانا             ساتھ ایماں   کے مجھ کو اٹھانا

نَزع میں   دیدِ بدرُ الدُّجیٰ کی          میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

پھر عرب کی حسیں   وادیاں   ہوں       کاش! مکّے کی شادابیاں   ہوں 

مجھ کو دیدارِ ثور و حِرا کی                   میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

دیدے پردہ بہو بیٹیوں   کو                ماؤں   بہنوں   سبھی عورَتوں   کو

ہم سبھی کو حقیقی حیا کی             میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

اب تک اولادسے جو ہیں   محروم        اُن کی بھر گود اے ربِّ قَیُّوم

سب کو رحمت کی اپنی عطاکی            میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

جگمگاتی   رہے    قبرِ  عطّارؔ             اے رحیم اورستّار و غفّار

تا ابد فَضل و رَحم و عطا کی             میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

حج کا شَرَف ہو پھر عطا یا ربِّ مصطَفٰے

(۱۵ جمادی الاخرہ ۱۴۳۴ھ۔بمطابق2013-04-25)

حج کا شَرَف ہو پھر عطا یاربِّ مصطَفٰے

میٹھا مدینہ پھر دِکھا یا ربِّ مصطَفٰے

مل جائے اب رہائی فراقِ مدینہ سے

ہو یہ کرم، ہو یہ عطا یا ربِّ مصطَفٰے

دیدے طوافِ خانۂ کعبہ کا پھر شَرَف

فرما یہ پورا مُدَّعا یا ربِّ مصطَفٰے

 

 



[1]     مُعافی ۔



Total Pages: 406

Go To