Book Name:Wasail e Bakhshish

اُنکے قدموں  میں  اِس کوقضا کی         میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

 

لاج رکھ میرے دستِ دُعا کی میرے مولیٰ تُو خیرات دیدے

(۱۶ محرم الحرم ۱۴۳۳ھ۔ بمطابق2011-12-12)

لاج رکھ میرے دستِ دُعا کی           میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

اپنی رَحمت کی اپنی عطا کی                میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

قلب میں   یاد تیری بسی ہو        ذِکر لب پر تِرا ہر گھڑی ہو

مستی و بے خودی اور فَنا([1])کی             میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

کرنا رَحمت خدا مجھ پہ اپنی        رکھ عنایت سدا مجھ پہ اپنی

دائمی([2])اور حتمی([3]) رِضا کی                 میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

نَفْس نے  لذَّتوں   میں   پھنسایا     مجھ پہ لطف و کرم ہو خدایا

دل سے چاہَت مِٹا ماسِوا([4])کی     میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

اَزپئے غوثِ اعظم ولایت      اپنی رَحمت سے فرما عنایت

اپنی، اپنے نبی کی وِلا کی    میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

حال عاصی کا بے حد بُرا ہے      تیری رَحمت کا بس آسرا ہے

عَفوِ جُرم و قُصُور و خطا کی            میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

میں   گناہوں   میں   لتھڑا ہوا ہوں        بد سے بدتر ہوں   بگڑا ہوا ہوں 

عَفوِ جُرم و قُصُور و خطا کی          میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

ہے یہ تسلیم سب سے بُرا ہوں          میں   سُدھرنا  خدا چاہتا ہوں 

عَفوِ جُرم و قُصُور و خطا کی            میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

ہو کرم از طفیلِ مدینہ                     میں   نہ ہرگز پھروں   کر کے توبہ

عَفوِ جُرم و قُصُور و خطا کی            میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

 



[1]     فَنافِی اللّٰہ ۔

[2]     ہمیشہ کیلئے۔ 

[3]     مُستقل

[4]     خاص اصطلاح کے اعتبار سے ہر وہ چیز جو خدا سے دور لیجانے والی ہے اُسے ماسوا کہتے ہیں  ۔



Total Pages: 406

Go To