Book Name:Wasail e Bakhshish

محبوب کا صَدقہ تُو مجھے نیک بنا دے

اُستاد ہوں  ، ماں  باپ ہوں  ، عطّارؔ بھی ہوساتھ

یُوں   حج کو چلیں   اور مدینہ بھی دکھا دے

فرمانِ مصطَفٰے (صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم):جس نے مجھ پر روزِ جُمُعہ

دو سو بار دُرُودِپاک پڑھا اُس کے دو سو سال کے گناہ مُعاف ہوں گے۔

                                                                                                                                                                                                 (کَنْزُالْعُمَّالْ، ج۱، ص۲۵۶، حدیث۲۲۳۸)

اللّٰہ مجھے عالمۂ دین بنادے   ([1])

(دعوتِ اسلامی کے کئی مدرَسۃ المدینہ (للبنات) اور جامعۃ المدینہ ( للبنات) ہیں  ، خُصوصاً ان کی طالِبات اور عُموماً تمام دینی طالبات کیلئے نظم)

اللّٰہ ! مجھے عالِمۂ دین بنادے ([2])

قراٰن کے اَحکام پہ بھی مجھ کو چلادے

ہو جایا کرے کاش مجھے جلد سبق یاد

مولا تو مرا حافِظہ مضبوط بنادے

سستی ہو مری دُور میں   اُٹھ جاؤں   سویرے

تو دل مرا تعلیم میں   اللّٰہ  لگادے

ہو جامعہ کا مجھ سے نہ نقصان کبھی بھی

اللّٰہ  !یہاں   کے مجھے آداب سکھادے

 

چُھٹّی نہ کروں   بھول کے پڑھنے کی کبھی بھی

مولا مجھے اَوقات کی پابند بنادے

اُستانی ہوں   موجود یا باہَر کہیں   مصروف

عادت تُو مِری شور مچانے کی مِٹادے

خصلت ہو شرارت کی مِری دُور الٰہی!

سنجیدہ بنادے مجھے سنجیدہ بنادے

 



[1]     واضح رہے کہ سابقہ صفحات میں   یہ کلام کچھ تغیّر کے ساتھ مذکّرکے لیے کہا گیا ہے اُمّید ہے کہ ضروری تفریق کے ساتھ دونوں   کلام علیٰحدہ علیٰحدہ ہونے میں   قارئین کو سہولت رہے گی۔

[2]     حفظ کرنے والی طالبات یہ مِصرع یوں   بھی پڑھ سکتی ہیں  :’’ اللّٰہ! مجھے حافِظہ قُراٰں   کی بنا دے‘‘۔



Total Pages: 406

Go To