Book Name:Wasail e Bakhshish

یاربِّ محمَّد مِری تقدیرجگادے

یاربِّ محمد مِری تقدیر جگادے        صَحرائے مدینہ مجھے آنکھوں  سے دکھادے

پیچھا مِرا دنیا کی محبت سے چُھڑا دے یارب مجھے دیوانہ مدینے کا بنادے

روتا ہوا جس وقت میں   دربار میں   پہنچوں       اُس وقت مجھے جلوۂ محبوب دکھادے

دل عشقِ محمد میں   تڑپتا رہے ہردم            سینے کو مدینہ مِرے اللّٰہ بنادے

بہتی رہے اکثر شہِ ابرار کے غم میں روتی ہوئی وہ آنکھ مجھے میرے خدا دے

ایمان پہ دے موت مدینے کی گلی میں    مدفن مِرا محبوب کے قدموں   میں   بنادے

اللّٰہ کرم اتنا گنہ گار پہ فرما           جنّت میں   پڑوسی مِرے آقا کا بنادے

دیتا ہوں   تجھے وَاسِطہ میں   پیارے نبی کا        اُمَّت کو خدایا رہِ سنّت پہ چلا دے

اللّٰہ ملے حج کی اِسی سال سعادت             بدکار کو پھر روضۂِ محبوب دکھادے

عطارؔ سے محبوب کی سُنَّت کی لے خدمت

ڈنکا یہ تِرے دین کا دُنیا میں   بجادے

اللّٰہ! مجھے حافِظِ قُراٰن بنادے

(حِفظ و ناظِرہ کے طلبہ کی مُناجات)

اللّٰہ ! مجھے حافِظِ قُراٰن بنادے

قُراٰن کے اَحکام پہ بھی مجھ کو چلا دے

ہوجایا کرے یاد سَبَق جلد الٰہی!

مولیٰ تُو مِرا حافِظہ مضبوط بنا دے

سُستی ہو مِری دور اُٹھوں   جلد سَویرے

تُو مدرَسے میں   دِل مِرا اللّٰہ ! لگا دے

ہو مدرَسے کا مجھ سے نہ نقصان کبھی بھی

اللّٰہ !یہاں   کے مجھے آداب سکھا دے

چُھٹّی نہ کروں   بھول کے بھی مدرَسے کی میں 

 



Total Pages: 406

Go To