Book Name:Wasail e Bakhshish

سبھی ایک ہو جائیں   ایمان والے             پئے شاہِ عالی نَسب یاالٰہی

کبھی تو مجھے خواب میں   میرے مولیٰ        ہو دیدارِ ماہِ عَرب یاالٰہی

خدایا بُرے خاتمے سے بچا لے               گنہگار ہے جاں   بَلب([1])یاالٰہی

نظر میں   محمد کے  جلوے بسے ہوں چلوں   اِس جہاں   سے میں   جب یاالٰہی

پسِ مَرگ([2])ہو روزِ روشن کی مانَند                    مِری قبر کی تِیرہ شب([3])یاالٰہی

گناہوں   سے عطّارؔ کو دے مُعافی

کرم ہو، نہ کرنا غَضب یا الٰہی

مِٹا میرے رنج و الم یا الٰہی

مِٹا میرے رنج و اَلَم یاالٰہی                 عطا کر مجھے اپنا غم یاالٰہی

شرابِ محبت کچھ ایسی پِلا دے کبھی بھی نشہ ہو نہ کم یاالٰہی

مجھے اپنا عاشِق بنا کر بنا دے      تُو سرتاپا تصویرِ غم یاالٰہی

فَقَط تیرا طالِب ہوں   ہرگز نہیں   ہوں     طلبگارِ جاہ و حَشَم یاالٰہی

نہ دے تاجِ شاہی نہ دے بادشاہی       بنا دے گدائے حرم یاالٰہی

جو عشقِ محمد میں   آنسو بہائے            عطا کر دے وہ چشمِ نَم یاالٰہی

شَرَف حج کا دیدے چلے قافِلہ پھر مِرا کاش! سُوئے حرم یاالٰہی

دکھا دے مدینے کی گلیاں   دکھا دے      دکھا دے نبی کا حرم یاالٰہی

چلے جان اِس شان سے کاش یہ سر        درِ مصطَفٰے پر ہو خَم یاالٰہی

مِرا سبز گنبد کے سائے میں   نکلے        محمد کے قدموں   میں   دم یاالٰہی

عبادت میں   لگتا نہیں   دل ہمارا ہیں        عِصیاں   میں   بدمَست ہم یاالٰہی

مجھے دیدے ایمان پر اِستقامت       پئے   سیِّدِ   مُحْتَشَم   یاالٰہی

مِرے سر پہ عِصیاں   کا بار آہ مولیٰ!    بڑھا جاتا ہے دم بدم یاالٰہی

زمیں   بوجھ سے میرے پھٹتی نہیں   ہے       یہ تیرا ہی تو ہے کرم یاالٰہی

 



[1]     مرنے کے قریب۔

[2]     مرنے کے بعد۔

[3]     اندھیری رات۔



Total Pages: 406

Go To